قاضی امجد علی

کتاب : سوانح حیات بابا تاج الدین ناگپوری رحمۃ اللہ علیہ

مصنف : سہیل احمد عظیمی

مختصر لنک : https://iseek.online/?p=14739

۱۸۹۲؁ء میں پیدا ہوئے۔ دو سال کی عمر میں والد صاحب کا انتقال ہو گیا تو پھوپھی نے گود لیکر پالا۔ پھوپھی کا خاندان ناندوراضلع بلڈانا (برار) میں آباد تھا۔ مڈل تک پڑھنے کے بعد آگے کی تعلیم کھام گاؤں میں حاصل کی۔ تعلیم سے فارغ ہوکر جی آئی پی ریلوے میں ملازمت کی درخواست دی۔ ٹکٹ کلکٹر کی ملازمت مل گئی۔ اور جلد ہی ترقی کرکے بحیثیت گارڈ بھساول جنکشن پر تعینات کئے گئے۔

قاضی صاحب اپنے ایک ساتھی سید محمد سبحان الدین کے ساتھ باباصاحبؒ کی خدمت میں پہنچے۔ باباصاحبؒ نے آپ کو گیارہ روز تک اپنے پاس رکنے کا حکم دیا۔ گیارہویں دن صبح باباصاحبؒ نے کہا۔’’ریل پر جانے والوں کو بلاؤ۔‘‘ بآوازِ بلند یہ بات پکاری گئی۔ تو صرف قاضی امجد علی ریلوے سے متعلق نکلے۔ قاضی امجد علی باباصاحبؒ کے پاس پہنچے تو انہوں نے قاضی صاحب کے سرو پشت پر دستِ شفقت پھیر کر کہا۔’’حضرت جاکوآؤ۔‘‘ حسبِ حکم ناگپور سے بھساول پہنچے۔ اگلے دن صبح ڈیوٹی پر حاضرہونا تھا۔ لیکن رات کو باباصاحبؒ نے بذریعۂ کشف حکم دیا’’واپس آتے جی حضرت۔‘‘آپ پہلی ٹرین سے ناگپور روانہ ہوئے۔ باباصاحبؒ اسٹیشن پر ٹہل رہے تھے۔ باباصاحبؒ نے سرپر ہاتھ پھیر کر دعا دی۔ اور واپس جانے کا حکم دیا۔ باباصاحبؒ کے پاس قاضی صاحب کی ملازمت کا عجیب حال ہوگیا۔ باباصاحبؒ حکم دیتے کہ ’’یہیں رہتے جی۔‘‘ تو آپ ملازمت سے بے نیاز ہوکر باباصاحبؒ کے پاس رہنے لگتے۔ اور جب واپسی کا حکم ملتا، دوبارہ ملازمت کی درخواست دیتے اور اسی عہدہ پر بحال کر دیئے جاتے۔ ایک مرتبہ رات میں باباصاحبؒ کی طرف سے حکم ہوا۔’’حضرت یہاں آتے جی۔‘‘ اگلی صبح ناگپور تبادلہ کا تار ملا۔ ناگپور پہنچے تو باباصاحبؒ نے فرمایا۔’’آؤجی !حضرت، یہیں آم کے درخت کے نیچے رہتے۔ بھٹیارا پکاتا اپن کھاتے۔‘‘قاضی صاحب آم کے درخت کے نیچے ٹھہر گئے۔ اور باباصاحبؒ انہیں نظرِ فیض سے نوازتے رہے۔

قاضی صاحب کی عمر ۲۸؍سال کی ہوئی تو باباصاحبؒ نے پھول کا ہار، ایک کتاب اور ایک روپیہ عنایت کرکے کہا۔’’حضرت سنت کی پیروی کرتے جی۔ جا کوآؤ۔‘‘ قاضی صاحب پھوپھی کے پاس ناندورا پہنچے تو وہ ان کی شادی کے لئے منتظر بیٹھی تھیں۔ قاضی صاحب رشتہ ٔازدواج میں منسلک ہوگئے۔

شادی کے دوسال بعد باباصاحبؒ نے قاضی صاحب سے کہا۔’’بہت کھانے لگا رے۔ آج سے تیرا کھانا بند۔ تین کپ کالی چائے پیتے، اچھے رہتے۔‘‘نوّے دن کے بعد باباصاحبؒ نے فرمایا۔’’اب تو صحیح ہوگیارے۔ کھاتے پیتے اچھے رہتے۔‘‘ باباصاحبؒ کے وصال کے بعد قاضی صاحب پر جذبی کیفیت طاری ہوگئی تھی۔ ایک روز باباصاحبؒ نے حکم دیا۔’’حضرت دنیا میں رہ کر دنیا کے کام کرتے۔اچھے رہتے۔‘‘چنانچہ ناگپور سے ناندورا گئے۔ ہومیوپیتھی کا کورس کر کے ڈاکٹر سند حاصل کی اور علاج معالجہ کے ذریعے خدمتِ خلق کی طرف رجوع ہوئے۔

باباصاحبؒ کے حکم پر بمبئی گئے۔اور وہاں بھی خدمت کا سلسلہ جاری رکھا۔ جب پاکستا ن کا قیام وجود میں آیا تو قاضی صاحب کراچی آگئے۔ اور باباصاحبؒ کی تعلیمات کو پھیلانے اور نذرونیاز کا اہتمام جاری رکھا۔

وصال سے پہلے قاضی صاحب نے کھانا بند کر دیا اور نوے دن تک کچھ نہیں کھایا بالآخر ۱۵؍ربیع الثانی ۱۳۷۸؁ھ مطابق ۲۸؍اکتوبر ۱۹۵۸؁ء قاضی صاحب نے پردہ فرمالیا۔ سی۔ ون ایریا لیاقت آباد کے قبرستان میں آپ کا مزار ہے۔

یہ مضمون چھپی ہوئی کتاب میں ان صفحات (یا صفحہ) پر ملاحظہ فرمائیں: 190 تا 192

سوانح حیات بابا تاج الدین ناگپوری رحمۃ اللہ علیہ کے مضامین :

ِ انتساب  ِ پیش لفظ  ِ اقتباس  ِ 1 - روحانی انسان  ِ 2 - نام اور القاب  ِ 3 - خاندان  ِ 4 - پیدائش  ِ 5 - بچپن اورجوانی  ِ 6 - فوج میں شمولیت  ِ 7 - دو نوکریاں نہیں کرتے  ِ 8 - نسبت فیضان  ِ 9 - پاگل جھونپڑی  ِ 10 - شکردرہ میں قیام  ِ 11 - واکی میں قیام  ِ 12 - شکردرہ کو واپسی  ِ 13 - معمولات  ِ 14 - اندازِ گفتگو  ِ 15 - رحمت و شفقت  ِ 16 - تعلیم و تلقین  ِ 17 - کشف و کرامات  ِ 18 - آگ  ِ 19 - مقدمہ  ِ 20 - طمانچے  ِ 21 - پتّہ اور انجن  ِ 22 - سول سرجن  ِ 23 - قریب المرگ لڑکی  ِ 24 - اجنبی بیرسٹر  ِ 25 - دنیا سے رخصتی  ِ 26 - جبلِ عرفات  ِ 27 - بحالی کا حکم  ِ 28 - دیکھنے کی چیز  ِ 29 - لمبی نکو کرورے  ِ 30 - غیبی ہاتھ  ِ 31 - میڈیکل سرٹیفکیٹ  ِ 32 - مشک کی خوشبو  ِ 33 - شیرو  ِ 34 - سرکشن پرشاد کی حاضری  ِ 35 - لڈو اور اولاد  ِ 36 - سزائے موت  ِ 37 - دست گیر  ِ 38 - دوتھال میں سارا ہے  ِ 39 - بدکردار لڑکا  ِ 40 - اجمیر یہیں ہے  ِ 41 - یہ اچھا پڑھے گا  ِ 42 - بارش میں آگ  ِ 43 - چھوت چھات  ِ 45 - ایک آدمی دوجسم۔۔۔؟  ِ 46 - بڑے کھلاتے اچھے ہو جاتے  ِ 47 - معذور لڑکی  ِ 48 - کالے اور لال منہ کے بندر  ِ 49 - سونا بنانے کا نسخہ  ِ 50 - درشن دیوتا  ِ 51 - تحصیلدار  ِ 52 - محبوب کا دیدار  ِ 53 - پانچ جوتے  ِ 54 - بیگم صاحبہ بھوپال  ِ 55 - فاتحہ پڑھو  ِ 56 - ABDUS SAMAD SUSPENDED  ِ 57 - بدیسی مال  ِ 58 - آدھا دیوان  ِ 59 - کیوں دوڑتے ہو حضرت  ِ 60 - دال بھات  ِ 61 - اٹیک، فائر  ِ 62 - علی بردران اورگاندھی جی  ِ 63 - بے تیغ سپاہی  ِ 64 - ہندو مسلم فساد  ِ 65 - بھوت بنگلہ  ِ 66 - اللہ اللہ کر کے بیٹھ جاؤ  ِ 67 - شاعری  ِ 68 - وصال  ِ 69 - فیض اور فیض یافتگان  ِ 70 - حضرت انسان علی شاہ  ِ 71 - مریم بی اماں  ِ 72 - بابا قادر اولیاء  ِ 73 - حضرت مولانا محمد یوسف شاہ  ِ 74 - خواجہ علی امیرالدین  ِ 75 - حضرت قادر محی الدین  ِ 76 - مہاراجہ رگھو جی راؤ  ِ 77 - حضرت فتح محمد شاہ  ِ 78 - حضرت کملی والے شاہ  ِ 79 - حضرت رسول بابا  ِ 80 - حضرت مسکین شاہ  ِ 81 - حضرت اللہ کریم  ِ 82 - حضرت بابا عبدالرحمٰن  ِ 83 - حضرت بابا عبدالکریم  ِ 84 - حضرت حکیم نعیم الدین  ِ 85 - حضرت محمد عبدالعزیز عرف نانامیاں  ِ 86 - نیتا آنند بابا نیل کنٹھ راؤ  ِ 87 - سکّوبائی  ِ 88 - بی اماں صاحبہ  ِ 89 - حضرت دوّا بابا  ِ 90 - نانی صاحبہ  ِ 91 - حضرت محمد غوث بابا  ِ 92 - قاضی امجد علی  ِ 93 - حضرت فرید الدین کریم بابا  ِ 94 - قلندر بابا اولیاء  ِ 94.1 - سلسلۂ عظیمیہ  ِ 94.2 - لوح و قلم  ِ 94.3 - نقشے اور گراف  ِ 94.4 - رباعیات
سارے دکھاو ↓

براہِ مہربانی اپنی رائے سے مطلع کریں۔

    Your Name (required)

    Your Email (required)

    Subject (required)

    Category

    Your Message (required)