یہ تحریر العربية (عربی) English (انگریزی) Русский (رشیئن) ไทย (تھائی) 简体中文 (چائینیز) میں بھی دستیاب ہے۔

مراقبہ

ذہنی سکون کے لئے مراقبہ کیجئے

بے قراری، عدم سکون اور اضطراب سے رستگاری حاصل کرنے کے لئے اسلاف سے جو ہمیں ورثہ ملا ہے اس کانام مراقبہ ہے۔ مراقبہ کے ذریعے ہم اپنے اندر مخفی صفات کو منظر عام پرلاسکتے ہیں۔ خوف و دہشت میں مبتلا،عدم تحفظ کے احساس میں سسکتی اور مصائب و آلام میں گرفتارنوع انسانی کے لئے مراقبہ ایک ایسا لائحہ عمل ہے جس پر عمل پیرا ہوکر ہم اپنا کھویا ہوا اقتدار دوبارہ حاصل کر کے زندہ قوموں کی صفوں میں ممتاز مقام حاصل کر سکتے ہیں ۔

اللہ کی کتاب

قرآن پاک نوع انسانی پر اللہ تعالیٰ کا احسان عظیم ہے جو اس نے اپنے حبیب صلی اللہ علیہ و سلم کے ذریعے ہم پر کیا ہے۔ یہ وہ کتاب ہے جو ہر قسم کے شک و شبہ سے پاک ہے۔ اور اس میں ہدایت کے طلب گاروں کے لئے سامان نجات ہے۔ اس مقدس صحیفے میں سب کچھ سمو دیا گیا ہے

⁠⁠⁠حوالہ : تجلیات

آدھے جسم میں درد

سوال: روحانی ڈائجسٹ ہمیں اور ہمارے گھر والوں کو بہت پسند ہے اور ہم سب آپ کے شکر گزار ہیں کہ آپ لوگوں کو سیدھی راہ دکھا رہے ہیں۔ میں آپ کو ایک بار پھر زحمت دے رہی ہوں۔ مسئلہ یہ ہے کہ میری امی جان مستقل بیمار رہتی ہیں۔ ایک بیماری چھوٹتی ہے تو دوسری لگ جا

⁠⁠⁠حوالہ : روحانی ڈاک (جلد اوّل)

سابقہ دور میں سائنس زیادہ ترقی یافتہ تھی

حضرت یوسفؑ کے دور میں سائنس ہمارے زمانے سے زیادہ ترقی یافتہ اور فعال تھی۔ اہرام میں لگے ہوئے پتھر کے بلاک کا وزن ۹۰ سے ۶۰۰ سو ٹن تک ہے۔ اتنے وزنی پتھروں کو کئی منزلوں تک پہنچانے کا مطلب یہ ہے کہ اس دور کے سائنسدانوں نے کشش ثقل کو کم سے کم کرنے یا نہ ہو

⁠⁠⁠حوالہ : محمد الرّسول اللہ(صلی اللہ علیہ وسلم) جلد سوئم

کشش بعید۔ کشش قریب

چنانچہ ذی روح یا غیر ذی روح ہر فرد کے اندر اکبر صلاحیت ہی اجتماعی زندگی کی فہم رکھتی ہے۔ ایک بکری سورج کی حرارت کو اس لئے محسوس کرتی ہے کہ وہ اور سورج شخص اکبر کی حدود میں ایک دوسرے سے الحاق رکھتے ہیں۔ اگر کوئی انسان شخص اکبر کی حدود میں فہم وفراست نہ

⁠⁠⁠حوالہ : احسان و تصوف

ملیریا

اس بخار میں آسمانی رنگ کا پانی ایک ایک اونس صبح شام دیں اورجسم پر آسمانی رنگ کی شعاعیں ڈالیں۔

⁠⁠⁠حوالہ : رنگ و روشنی سے علاج

علم کی حیثیت

سوال: علم کی حیثیت کیا ہے اور یہ نوعِ انسانی میں کس طرح منتقل ہوتا ہے؟ جواب: بحیثیت انسان جب ہم عقل و شعور سے کام لیتے ہیں تو یہ بات ہمارے اوپر پوری طرح واضح ہو جاتی ہے کہ دنیا میں یا کائنات میں جو کچھ موجود ہے دراصل اس کی حیثیت علم کی ہے۔ اگر کسی چیز

⁠⁠⁠حوالہ : روح کی پکار

کشف القبور

تصوف میں ایک مقام کشف القبور ہے یعنی مرنے کے بعد جس مقام پر روحیں رہتی ہیں وہاں وہ کس حال میں ہیں، کس طرح کی زندگی گزار رہی ہیں اور اس دنیا کے شب و روز ماہ و سال کیسے ہیں نیز روحوں سے بات چیت اور ملاقات کے عمل کو کشف القبور کہا جاتا ہے۔ اس صلاحیت کو بی

⁠⁠⁠حوالہ : روحانی نماز

معذور لڑکی

راجہ رگھو جی راؤ کے ملازم منشی نور علی صاحب کا بیان ہے کہ ایک رات آٹھ بجے کے قریب عیسیٰ خاں صاحب کھانا لے کر باباصاحبؒ کی خدمت میں آئے اور باباصاحبؒ سے اصرار کیا کہ کھانا کھالیں۔ باباصاحبؒ نے جواب دیا۔’’ٹھیر رے! میرا مہمان آیاہے۔ اس سے مل لوں، تب کھاؤں

⁠⁠⁠حوالہ : سوانح حیات بابا تاج الدین ناگپوری رحمۃ اللہ علیہ

بخار

سوال: چند ماہ پیشتر مجھے بخار ہو گیا تھا اور میں نے خود اس کا علاج کیا لیکن کوئی افاقہ نہیں ہوا اور مرض میں زیادتی ہو گئی۔ تو ڈاکٹر سے رجوع کیا۔ تقریباً ڈیڑھ ماہ تک علاج ہوتا رہا لیکن کسی قسم کا کوئی افاقہ نہیں ہوا۔ ڈاکٹر کے مشورے پر میں نے ملیریا پیرا

⁠⁠⁠حوالہ : روحانی ڈاک (جلد اوّل)

دستک

زمین پر انسان کی پیدائش سے قبل جنات آبا د تھے…… جنات بھی اچھے اور برے کام کر نے کی صلا حیت ر کھتے ہیں ۔ اﷲ تعالیٰ نے اچھے کاموں کا حکم اور بر ے کاموں سے منع فر مایا ہے …… اﷲ تعالیٰ کی نا فر ما نی ، سر کشی ، جھوٹ ، لڑائی، فساد ،قتل اور خون خرابہ یہ سب ب

⁠⁠⁠حوالہ : باران رحمت

مسکراہٹ

آدمی آدمی کی دوا ہوتا ہے۔ آدمی آدمی کا دوست ہوتا ہے۔ دوستی کو پروان چڑھانے کے لئے ضروری ہے کہ آپ اپنے دوستوں کے معاملات میں دلچسپی لیں، ان کے کام آئیں اور مالی اعانت کی استطاعت نہ ہو تو ان کے لئے وقت کا ایثار کریں۔ یہ بھی حق دوستی ہے کہ جب آپس میں میل

⁠⁠⁠حوالہ : تجلیات

شجر ممنوعہ کی روحانی تفسیر

سوال: مذہبی روایات میں یہ بات وارد ہوئی کہ آدمؑ پہلے جنت میں تھے مگر بعد میں اپنی غلطی کے باعث زمین پر آ گئے۔ آدم علیہ السلام کو جنت میں ایک درخت کے قریب جانے سے منع کیا گیا تھا مگر شیطان نے انہیں بہکایا اور انہوں نے اس درخت کا پھل کھا لیا۔ کوئی کہتا ہ

⁠⁠⁠حوالہ : روحانی ڈاک (جلد اوّل)

زم زم

جب حضرت ہاجرہؓ مروہ پر تھیں تو کانوں میں سرگوشی ہوئی۔ یہ سرگوشی آواز بن گئی تو حیران ہو کر ادھر ادھر دیکھا اور فرمایا۔ ’’اگر تم کچھ مدد کر سکتے ہو تو سامنے آؤ۔‘‘ دیکھا حضرت جبرائیل علیہ السلام سامنے ہیں۔ حضرت جبرائیل علیہ السلام نے زمین پر پیر مارا اور

⁠⁠⁠حوالہ : آگہی

دِق اور سِل

دِق اور سِل روشنیوں کی کمی اور زیادتی سے پیداہونے والے امراض اگر ام الدماغ میں چھوٹے چھوٹے خلا بن جائیں اوران کی تعداد بہت زیادہ ہوجائے توپھیپھڑوں میں ایک خاص قدوقامت کے کیڑے گلے کے ذریعے اترتے رہتے ہیں۔ یہ کیڑے کہیں بھی جمع ہوجاتے ہیں اور یہی مرض دِق

⁠⁠⁠حوالہ : رنگ و روشنی سے علاج

تارِکُ الدّنیا

*دوسری صدی ہجری میں جب یونانی کتابوں کے عربی میں ترجمے ہوئے تو اشراقی حکماء نے سوف کا ترجمہ ’’حکیم ‘‘کردیا ۔ رفتہ رفتہ یہ لفظ سوفی…………سے ’’صوفی‘‘ ہوگیا۔ یہ روایت بھی ہے کہ غوث بن مُرّ نے خود کو خانۂ کعبہ کے لئے وقف کردیا تھا۔اس کا مشہور نام ’’صَوفہ‘‘تھ

⁠⁠⁠حوالہ : احسان و تصوف

قلندر بابا اولیا ء ؒ

جمعہ کی نماز کے بعد نمازی مسجد سے باہر آئے تو دیکھا کہ ایک صاحب مذہبی لٹیریچر تقسیم کر رہے تھے۔ لوگ اس لٹریچر کو حاصل کرنے میں کچھ ایسی بے صبری کا مظاہرہ کر رہے تھے کہ لگتا تھا کہ شیرینی تقسیم ہو رہی ہے۔ میرے ہاتھ میں بھی ایک کتاب لگی۔ جب میں وہاں سے چ

⁠⁠⁠حوالہ : آوازِ دوست

مکہ میں تین روز

ہجرت کے ساتویں برس سیّدنا علیہ الصلوٰۃوالسلام اپنے دو ہزار اصحاب کے ہمراہ عمرہ کی ادائیگی کے لئے مکہ روانہ ہوئے۔ چونکہ سارے مسلمان زیارت کے غرض سے مکہ جارہے تھے لہذا ان کے پاس سوائے تلوارکے کوئی اور اسلحہ نہیں تھا۔ اس زمانے میں تلوار جنگی اسلحہ نہیں عر

⁠⁠⁠حوالہ : محمد الرّسول اللہ(صلی اللہ علیہ وسلم) جلد اوّل

ایک خوبصورت روحانی تمثیل

ابدالِ حق قلندر بابا اولیا ءؒ نے جنات کی دنیا سے متعلق حقائق و انکشاف پر ایک روئداد لکھی ہے: *شاہ عبدالعزیز محدث دہلوی ؒ کے مدرسے میں جس طرح انسانوں کے لڑکے پڑھتے تھے اسی طرح جنات کے لڑکے بھی تعلیم حاصل کرتے تھے۔یہ دوسری بات ہے کہ وہ تعداد میں بہت کم ت

⁠⁠⁠حوالہ : احسان و تصوف

ایک ترکیب

دو ڈولفن ایک سانپ نما مچھلی اِیل (Eel) کے ساتھ کھیل رہی تھیں اور اس کا پیچھا کرکے اسے پکڑنے کی کوشش کر رہی تھیں۔ چالاک اِیل نے ڈولفنوں سے بچنے کیلئے اچانک غوطہ لگایا اور ایک سوراخ میں گھس کر پناہ گُزیں ہو گیا۔ اب ذرا ڈولفن کی ذہانت ملاحظہ فرمائیں کہ ان

⁠⁠⁠حوالہ : قلندر شعور

ہجرت حبشہ

حضرت محمد ﷺ کی کوششوں سے مکہ میں دین اسلام تیزی سے پھیل رہا تھا۔مسلمانوں کی بڑھتی ہوئی تعداد کو دیکھ کر کفار مکہ کو تشویش ہو گئی۔حضرت محمدﷺ کے ساتھ ساتھ انہوں نے دوسرے مسمانوں پر بھی ظلم کرنا شروع کر دیا۔ جب مسلمانوں کے لیے مکہ میں رہنا ممکن نہیں رہا ت

⁠⁠⁠حوالہ : بچوں کے محمد ﷺ (جلد اول)

براہِ مہربانی اپنی رائے سے مطلع کریں۔

    Your Name (required)

    Your Email (required)

    Subject (required)

    Category

    Your Message (required)