یہ تحریر العربية (عربی) English (انگریزی) Русский (رشیئن) ไทย (تھائی) 简体中文 (چائینیز) میں بھی دستیاب ہے۔

مراقبہ

ذہنی سکون کے لئے مراقبہ کیجئے

بے قراری، عدم سکون اور اضطراب سے رستگاری حاصل کرنے کے لئے اسلاف سے جو ہمیں ورثہ ملا ہے اس کانام مراقبہ ہے۔ مراقبہ کے ذریعے ہم اپنے اندر مخفی صفات کو منظر عام پرلاسکتے ہیں۔ خوف و دہشت میں مبتلا،عدم تحفظ کے احساس میں سسکتی اور مصائب و آلام میں گرفتارنوع انسانی کے لئے مراقبہ ایک ایسا لائحہ عمل ہے جس پر عمل پیرا ہوکر ہم اپنا کھویا ہوا اقتدار دوبارہ حاصل کر کے زندہ قوموں کی صفوں میں ممتاز مقام حاصل کر سکتے ہیں ۔

ملائکہ اعلان کرتے ہیں

اہل مدینہ دو مخصوص دن تفریح کیا کرتے تھے۔ رسول اللہﷺ نے دریافت فرمایا۔ ’’یہ دو روز کیا ہیں؟‘‘ اہل مدینہ نے عرض کیا۔ ’’یا رسول اللہﷺ! زمانہ جاہلیت کے وقت ہم ان دنوں میں کھیل کود اور تفریح کیا کرتے تھے۔‘‘ آپﷺ نے فرمایا۔ ’’اے اہل یثرب اللہ تعالیٰ نے تم کو

⁠⁠⁠حوالہ : آگہی

صبحِ بہاراں

عظیمیہ جامع مسجد میں فجر کی نماز کے بعد مراقبہ ہوتا ہے حضرت عظیمی صاحب مراقبہ کے بعد لیکچر ڈیلیور کرتے تھے فروری ۲۰۰۱ ؁ء میں یہ سلسلہ شروع ہوا اور مئی ۲۰۰۱ ؁ء تک جاری رہا لیکچر نمبر1 زندگی مسافر خانہ ہے مورخہ 25فروری 2001 ؁ء بروز اتوار حضور پاکﷺ کا ارش

⁠⁠⁠حوالہ : آگہی

قلندر شعور اسکول

قلندر شعور اسکول میں داخل ہونے سے پہلے میرے اندر دو برائیاں بہت زیادہ تھیں۔ اول یہ کہ میرا ذہن کاروباری تھا، جب بھی میں کسی آدمی سے ملتا تھا، اس کی ذات سے کوئی نہ کوئی توقع قائم کر لیتا تھا۔ قلندر بابا اولیاء ؒ کی غلامی میں آنے کے بعد سب سے پہلے اس طرز

⁠⁠⁠حوالہ : قلندر شعور

دو سَو سال کی نیند

ایک بہروپیا تھا۔ ہمیشہ نیا روپ بنا کر بادشاہ کی خدمت میں حاضر ہوتا تھا تاکہ بادشاہ کو مغالطہ میں رکھ کر انعام میں گھوڑا اور جوڑا حاصِل کرے مگر بادشاہ اس کے بہروپ سے متأثّر نہیں تھا۔ چنا نچہ بہروپیا ایک یوگی کے پاس گیا اور اس سے حَبسِ دَم (سانس پر کنٹرو

⁠⁠⁠حوالہ : قلندر شعور

جذبات کہاں بنتے ہیں؟

پروفیسر جامی صاحب! اساتذہ کرام بہاء الدین زکریا یونیورسٹی ملتان۔ السلام علیکم و رحمتہ اللہ خیالات و تصورات جسم پر کس طرح اثر انداز ہوتے ہیں؟ زندگی کا کوئی رخ ہو، صحت مندی کا رخ ہو، بیماری کا ہو، پریشانی کا ہو، خوشی کا ہو، احساس کمتری یا احساس برتری کا

⁠⁠⁠حوالہ : خطبات ملتان

رباعی

اچھی ہے بُری ہے دہر فریاد نہ کر جوکچھ کہ گزر گیا اُسے یاد نہ کر دو چار نفَس عُمر ملی ہے تجھ کو دو چار نفَس عُمر کو برباد نہ کر (قلندر بابا اولیاءؒ)

⁠⁠⁠حوالہ : قلندر شعور

نفس کی خواہش

سوال: آپ اپنی تحریروں میں زور دیتے ہیں کہ انسان اللہ تعالیٰ کو اپنی زندگی میں اس طرح شامل کرے کہ کسی بھی چیز سے اسی کا رشتہ اللہ تعالیٰ کے توسط سے قائم ہو۔ جنسی جذبہ ایسا جذبہ ہے کہ جب انسان اس جذبہ میں ہوتا ہے تو اس کو اس وقت کسی دوسری چیز کا خیال نہی

⁠⁠⁠حوالہ : ذات کا عرفان

مسجد الحرام

مسجد الحرام کے معنی حرمت اور عزت والی مسجد کے ہیں۔ اس سے مراد وہ عبادت گاہ ہے جس کے وسط میں خانہ کعبہ واقع ہے۔ ’’پاک ذات ہے جو لے گیا اپنے بندے کو راتوں رات ادب والی مسجد(مسجدالحرام) سے پرلی مسجد (مسجد الاقصیٰ)۔‘‘ (سورۃ بنی اسرائیل۔۱) جغرافیہ دانوں کی

⁠⁠⁠حوالہ : رُوحانی حج و عُمرہ

بچہ کی پیدائش میں آسانی

مندرجہ بالا نقش مومی کاغذ پرلکھکر پیدائش کے وقت حاملہ کی سیدھی ران میں باندھیں ۔ انشا ء اللہ ولادت آسانی کے ساتھ ہوگی۔ احتیاط:۔ یہ تعویذ اس وقت تک ران میں نہ باندھا جائےجب تک کہ ولادت کے آثار شروع نہ ہوں کیونکہ تجربہ میں یہ بات آئی ہے کہ اگر آثار شروع

⁠⁠⁠حوالہ : روحانی علاج

آدم و حوّا کی تخلیق

آسمانی کتابوں کو پڑھنے اور ان کتابوں کی تعلیمات پرغور کرنے سے یہ بات منکشف ہوتی ہے کہ آدم کو ایک جان سے تخلیق کِیا گیا ہے۔ تخلیق کی اس بنیاد کو نفس، جان اور نقطۂِ واحدہ کہا گیا ہے۔ عام حالات میں جب ہم تخلیق کا تذکرہ کرتے ہیں تو یہ سمجھا جاتا ہے کہ ہر

⁠⁠⁠حوالہ : قلندر شعور

چوکور کاغذ

سوال: میری والدہ عرصہ پانچ سال سے سخت بیمار ہیں ہر بڑے ڈاکٹر اور حکیم سے علاج کرایا لیکن کوئی فائدہ نہیں ہوا۔ بہت مہنگی مہنگی دوائیں کھائیں لیکن نتیجہ صفر رہا۔ والدہ کی پسلیوں، سیدھی ٹانگ اور ٹانگوں کے جوڑ میں درد رہتا ہے۔ مختلف ڈاکٹروں نے مختلف بیماری

⁠⁠⁠حوالہ : روحانی ڈاک (جلد اوّل)

ماں کے دودھ میں کمی

مفیدغذائیں مغز بنولہ نصف تولہ میدہ کی طرح باریک پیس کر سفوف کوڈیڑھ پاؤ دودھ میں ملاکر اس کی کھیر پکا کر روزانہ استعمال کرنا دودھ کی زیادتی کے لئے ازبس مفید ومجرب ہے۔  اگر پستانوں کی نشوونما پورے طور پر نہ ہوئی ہوتو ایسی عورتوں کوکھیری بھون کر کھانا چاہ

⁠⁠⁠حوالہ : رنگ و روشنی سے علاج

شعور کا آئینہ

کوئی بندہ علمِ تصوف اور روحانیت سے بھٹک جاتا ہے تو اس کے شعور میں ایسی محدودیت پیدا ہوجاتی ہے کہ شعور بوجھل ہو جاتا ہے شعو رکے آئینہ پرشک کی دبیزتہہ جم جاتی ہے۔ وہ دیکھتاہے لیکن کچھ نہیں دیکھتا۔ وہ سنتا ہے لیکن کچھ نہیں سنتا۔ بے مقصد زندگی اس کا نصب ال

⁠⁠⁠حوالہ : احسان و تصوف

صلوٰ ۃ کی اہمیت

*صلوٰۃ اس عباد ت کا نام ہے جس میں اﷲ کی بڑائی، تعظیم اور اس کی ربوبیت وحاکمیت کو تسلیم کیا جاتا ہے،نماز ہر پیغمبر اور اس کی امت پر فرض ہے۔ نماز قائم کر کے بندہ اﷲ سے قریب ہوجاتا ہے۔ نماز فواحشات اور منکرات سے روکتی ہے۔ صلٰوۃ دراصل اﷲ سے تعلق قائم کرنے

⁠⁠⁠حوالہ : احسان و تصوف

نفس کا عرفان

تصوف کے علوم یا علم ِ حضوری حاصل ہونے کے بعد انسان عالمِ دنیا سے نکل کر عالم ِ ارواح میں عالم ملکوت و جبروت میں پہنچ جاتا ہے۔صدقِ مقال،اکلِ حلال کمانے والا بندہ اور سیرتِ طیبہ صلی اﷲ علیہ وآلہٖ وسلم پر عمل کرنے والا امتی اپنے نفس اور اپنی روح سے واقفیت

⁠⁠⁠حوالہ : احسان و تصوف

معرفت کی مشعل

قدرت اپنے پیغام کو پہچابنے کیلئے دیے سے دیا جلاتی رہتی ہے۔ معرفت کی مشعل ایک ہاتھ سے دوسرے ہاتھ میں منتقل ہوتی رہتی ہے۔ صوفی، ولی، غوث، قطب، مجذوب، اَوتار، قلندر، اَبدال، قدرت کے وہ ہاتھ ہیں جن میں رَوشنی کی مشعل رَوشن ہے۔ یہ پاکیزہ لوگ اس رَوشنی سے اپ

⁠⁠⁠حوالہ : قلندر شعور

ایب نارمل زندگی

سوال: میرا چھوٹا بھائی جس کی عمر دس سال ہے آج سے تقریباً ایک مہینہ پہلے اپنی والدہ کے ساتھ صدر گیا۔ وہاں بس اسٹاپ پر بس کے ہارن سے اس قدر خوفزدہ ہوا کہ ہاتھ پاؤں سن اور حلق خشک ہو گیا، رنگ بھی پیلا پڑ گیا۔ اس کے بعد حال یہ ہوا کہ اس کا حلق خشک رہنے لگا

⁠⁠⁠حوالہ : روحانی ڈاک (جلد اوّل)

سلطان

جتنے بھی انبیاء تشریف لائے ان سب کی تعلیمات کا حاصل یہ ہے کہ انسان مادی وجود میں رہتے ہوئے اﷲتعالیٰ کا عرفان حاصل کرے اور اﷲ کا عرفان حاصل کرنے کے لئے غیب کی دنیا میں داخل ہونا ضروری ہے جو سلطان (روح) کے ذریعہ ممکن ہے۔ یہ اس لئے ممکن ہے کہ روح ازل میں

⁠⁠⁠حوالہ : احسان و تصوف

شجر ممنوعہ کی روحانی تفسیر

سوال: مذہبی روایات میں یہ بات وارد ہوئی کہ آدمؑ پہلے جنت میں تھے مگر بعد میں اپنی غلطی کے باعث زمین پر آ گئے۔ آدم علیہ السلام کو جنت میں ایک درخت کے قریب جانے سے منع کیا گیا تھا مگر شیطان نے انہیں بہکایا اور انہوں نے اس درخت کا پھل کھا لیا۔ کوئی کہتا ہ

⁠⁠⁠حوالہ : روحانی ڈاک (جلد اوّل)

اسوۂ حسنہ

یہ دنیا سترہ بار تباہ ہو کر دوبارہ آباد ہوئی ہے۔ ہوتا یہ ہے کہ سمندر کے نیچے کی زمین اوپر آ جاتی ہے اور شہروں میں بسی ہوئی آباد زمین سمندر کے نیچے چلی جاتی ہے۔ سترہ یا اٹھارہ بار یہ زمین زیر سمندر جا چکی ہے یہ سلسلہ ختم نہیں ہوا، ابھی جاری ہے۔ پہلی مرت

⁠⁠⁠حوالہ : صدائے جرس

براہِ مہربانی اپنی رائے سے مطلع کریں۔

    Your Name (required)

    Your Email (required)

    Subject (required)

    Category

    Your Message (required)