حضرت فرید الدین کریم بابا

کتاب : سوانح حیات بابا تاج الدین ناگپوری رحمۃ اللہ علیہ

مصنف : سہیل احمد عظیمی

مختصر لنک : https://iseek.online/?p=14740

آپ کاٹھیاوار کے علاقے سے تعلق رکھتے ہیں۔ بچپن ہی میں باباتاج الدین ؒ کے پاس حاضر ہوگئے تھے۔ باباتاج الدینؒ سے مستفیض ہونے کے علاوہ آپ نے باباصاحبؒ کے دیگر فیض یافتگان سے بھی کسبِ فیض کیا۔ باباصاحبؒ کے حکم سے حکیم نعیم الدین کے خدمت میں رہ کر تصوف کے علاوہ طب اور دواسازی کی تعلیم حاصل کی۔ خواجہ علی امیر الدین کے پاس بھی رہے۔ آپ کو باباتاج الدینؒ سے گہرا قلبی لگاؤ رہا۔ کریم بابا نے باباتاج الدینؒ کے حالات وکشف وکرامات پر مبنی ایک کتاب ’’تاج مراری‘‘ بھی تالیف کی۔ آج کل آپ تاج آباد کمیٹی کے صدر ہیں۔ تاج آباد کمیٹی باباتاج الدینؒ کی درگاہ اور عرس کے انتظامات کرتی ہے۔

حضرت فریدالدین تاجی (کریم باباصاحب) اپنا ایک واقعہ بیان کرتے ہیں: جھانسی سے ایک صوفی صاحب باباصاحبؒ سے ملاقات کے لئے شکردرہ آئے۔ صوفی صاحب کاقیام میرے ساتھ تھا۔ اورہم دونوں میں ہروقت تصوف اور روحانیت پر گفتگو ہوتی تھی۔ ایک دن میں نے شاہ صاحب سے پوچھا ۔’’کیا کوئی ایسا آسان طریقہ ہے، جس کے ذریعے مجھ میں ایسی صلاحیت پیدا ہوجائے کہ میں عرفان کی منزل کو تیزی سے عبور کرلوں۔‘‘ انہوں نے ایک عمل بتاتے ہوئے کہا کہ اس عمل کو کسی قبرستان میں کرو۔ جذبۂ شوق سے مغلوب ہوکر میں قبرستان جاکر یہ عمل کرنے لگا۔ تیسرے روز آنکھیں بند کئے اپنے عمل میں مشغول کہ مجھے محسوس ہوا کہ باباصاحبؒ خفگی میں ڈوبی ہوئی آوازمیں مجھے پکاررہے ہیں۔ میں نے کھول کر چاروں طرف دیکھا تو باباصاحب ؒمجھے دکھائی نہ دیئے۔ میں دوبارہ آنکھیں بند کر کے عمل میں غرق ہوگیا۔ جیسے ہی عمل شروع کیا باباصاحبؒ کی غصہ بھری آوازکان میں پڑی۔ گویا آپ مجھے منع فرما رہے ہیں۔ میں فوراً اٹھا اور شکردرہ تالاب کے کنارے کنارے چلتا ہوا باباصاحبؒ کی نشست گاہ کی طرف بڑھا۔ اس وقت رات کے تین بجے تھے۔ جونہی میں اپنے پرانے جھونپڑے کے پاس پہنچا تو دیکھا کہ آم کے درخت کے نیچے باباصاحبؒ موجودہیں۔ بابانے مجھ سے کہا۔’’کیوں رے!کون بولابڑے بڑے پہاڑاں کھودنے کو؟ یہ ماچس لے۔‘‘

باباصاحبؒ نے ماچس مجھے پکڑاتے ہوئے کہا۔’’کاہے کورے اِدھر اُدھر ڈھونڈھتاہے۔‘‘پھر آپ نے کچھ الفاظ ادا فرمائے جو میری سمجھ میں نہ آئے۔ دل ہی دل میں عرض کیا۔’’حضور میری سمجھ میں نہیں آیا کہ آپ نے کیا فرمایا۔‘‘ دل میں اس خیال کے آتے ہی باباصاحبؒ نے ایک طمانچہ مجھے مارا اورفرمایا۔’’ذہن چراتاہے۔‘‘

باباصاحبؒ نے برابر کھڑے ہوئے ایک صاحب کے کندھے سے شال لیکر دوپلو میرے ہاتھ میں دیئے اور دوپلو خود پکڑکر فرمایا۔’’بچھا، یہ ہے دوکان ؂

مثنویٰ مادکانِ وحدت است             وحدت اندر وحدت اندروحدت است

جب باباصاحبؒ نے مجھے ماچس دی تو میرے ذہن میں یہ بات آئی کہ جس طرح ماچس کی تیلی میں شعلۂ نور چھپا ہوا ہے اسی طرح  اللہ کا نور بھی میرے اندر موجود ہے۔ اللہ کو اپنے پاس رکھ کر اِدھراُدھر ڈھونڈنا اورخود سے الگ سمجھنا لاحاصل ہے۔ جب انسان خود کو پہچان لیتاہے تو اس ہستی کا عرفان حاصل کر لیتاہے۔ جس نے خود کو متعارف کرانے کے لئے کائنات کو وجود کا لباس پہنایاہے۔

یہ مضمون چھپی ہوئی کتاب میں ان صفحات (یا صفحہ) پر ملاحظہ فرمائیں: 192 تا 194

سوانح حیات بابا تاج الدین ناگپوری رحمۃ اللہ علیہ کے مضامین :

ِ انتساب  ِ پیش لفظ  ِ اقتباس  ِ 1 - روحانی انسان  ِ 2 - نام اور القاب  ِ 3 - خاندان  ِ 4 - پیدائش  ِ 5 - بچپن اورجوانی  ِ 6 - فوج میں شمولیت  ِ 7 - دو نوکریاں نہیں کرتے  ِ 8 - نسبت فیضان  ِ 9 - پاگل جھونپڑی  ِ 10 - شکردرہ میں قیام  ِ 11 - واکی میں قیام  ِ 12 - شکردرہ کو واپسی  ِ 13 - معمولات  ِ 14 - اندازِ گفتگو  ِ 15 - رحمت و شفقت  ِ 16 - تعلیم و تلقین  ِ 17 - کشف و کرامات  ِ 18 - آگ  ِ 19 - مقدمہ  ِ 20 - طمانچے  ِ 21 - پتّہ اور انجن  ِ 22 - سول سرجن  ِ 23 - قریب المرگ لڑکی  ِ 24 - اجنبی بیرسٹر  ِ 25 - دنیا سے رخصتی  ِ 26 - جبلِ عرفات  ِ 27 - بحالی کا حکم  ِ 28 - دیکھنے کی چیز  ِ 29 - لمبی نکو کرورے  ِ 30 - غیبی ہاتھ  ِ 31 - میڈیکل سرٹیفکیٹ  ِ 32 - مشک کی خوشبو  ِ 33 - شیرو  ِ 34 - سرکشن پرشاد کی حاضری  ِ 35 - لڈو اور اولاد  ِ 36 - سزائے موت  ِ 37 - دست گیر  ِ 38 - دوتھال میں سارا ہے  ِ 39 - بدکردار لڑکا  ِ 40 - اجمیر یہیں ہے  ِ 41 - یہ اچھا پڑھے گا  ِ 42 - بارش میں آگ  ِ 43 - چھوت چھات  ِ 45 - ایک آدمی دوجسم۔۔۔؟  ِ 46 - بڑے کھلاتے اچھے ہو جاتے  ِ 47 - معذور لڑکی  ِ 48 - کالے اور لال منہ کے بندر  ِ 49 - سونا بنانے کا نسخہ  ِ 50 - درشن دیوتا  ِ 51 - تحصیلدار  ِ 52 - محبوب کا دیدار  ِ 53 - پانچ جوتے  ِ 54 - بیگم صاحبہ بھوپال  ِ 55 - فاتحہ پڑھو  ِ 56 - ABDUS SAMAD SUSPENDED  ِ 57 - بدیسی مال  ِ 58 - آدھا دیوان  ِ 59 - کیوں دوڑتے ہو حضرت  ِ 60 - دال بھات  ِ 61 - اٹیک، فائر  ِ 62 - علی بردران اورگاندھی جی  ِ 63 - بے تیغ سپاہی  ِ 64 - ہندو مسلم فساد  ِ 65 - بھوت بنگلہ  ِ 66 - اللہ اللہ کر کے بیٹھ جاؤ  ِ 67 - شاعری  ِ 68 - وصال  ِ 69 - فیض اور فیض یافتگان  ِ 70 - حضرت انسان علی شاہ  ِ 71 - مریم بی اماں  ِ 72 - بابا قادر اولیاء  ِ 73 - حضرت مولانا محمد یوسف شاہ  ِ 74 - خواجہ علی امیرالدین  ِ 75 - حضرت قادر محی الدین  ِ 76 - مہاراجہ رگھو جی راؤ  ِ 77 - حضرت فتح محمد شاہ  ِ 78 - حضرت کملی والے شاہ  ِ 79 - حضرت رسول بابا  ِ 80 - حضرت مسکین شاہ  ِ 81 - حضرت اللہ کریم  ِ 82 - حضرت بابا عبدالرحمٰن  ِ 83 - حضرت بابا عبدالکریم  ِ 84 - حضرت حکیم نعیم الدین  ِ 85 - حضرت محمد عبدالعزیز عرف نانامیاں  ِ 86 - نیتا آنند بابا نیل کنٹھ راؤ  ِ 87 - سکّوبائی  ِ 88 - بی اماں صاحبہ  ِ 89 - حضرت دوّا بابا  ِ 90 - نانی صاحبہ  ِ 91 - حضرت محمد غوث بابا  ِ 92 - قاضی امجد علی  ِ 93 - حضرت فرید الدین کریم بابا  ِ 94 - قلندر بابا اولیاء  ِ 94.1 - سلسلۂ عظیمیہ  ِ 94.2 - لوح و قلم  ِ 94.3 - نقشے اور گراف  ِ 94.4 - رباعیات
سارے دکھاو ↓

براہِ مہربانی اپنی رائے سے مطلع کریں۔

    Your Name (required)

    Your Email (required)

    Subject (required)

    Category

    Your Message (required)