یہ تحریر English (انگریزی) میں بھی دستیاب ہے۔

لطیف احساسات

کتاب : مراقبہ

مصنف : خواجہ شمس الدّین عظیمی

مختصر لنک : https://iseek.online/?p=12275

مراقبہ کرنے سے آدمی کے اندر ایسی روشنیاں اور لہروں کا ذخیرہ بڑھنے لگتے ہیں۔ جو کشش ثقل کی نفی کرتی ہیں۔ ان روشنیوں کی بدولت طالب علم ایسی کیفیات سے گزرتا ہے جن میں ثقل نہیں ہوتا۔ مثلاً مراقبہ کرتے ہوئے یا چلتے پھرتے، بیٹھے لیٹے وزن کا احساس ختم ہو جاتا ہے۔ کبھی آدمی خود کو روشنیوں کا بنا ہوا دیکھتا ہے۔ مراقبہ کرتے ہوئے بے وزنی کی کیفیت میں جسم معلق ہو جاتا ہے۔ آدمی خود کو خلاء میں پرواز کرتے دیکھتا ہے۔ کھلی اور بند آنکھوں سے مختلف رنگوں کی روشنیاں نظر آتی ہیں۔ دماغ کے اندر روشنی کے جھماکے(Spark) محسوس ہوتے ہیں۔ جسم میں سنسناہٹ محسوس ہوتی ہے اور برقی لہر دوڑتی ہوئی محسوس ہوتی ہے۔ روشنی کی تیزی اور ہجوم سے بعض اوقات جسم کو جھٹکے لگتے ہیں۔ سکون اور اطمینان کا احساس گہرا ہو جاتا ہے۔ غو رو فکر کرنے اور مسائل حل کرنے کی صلاحیت بڑھ جاتی ہے۔ یہ اور اس طرح کی دوسری بیشمار کیفیات و واردات روشنی کے نظام میں رنگینی اور روحوانی توانائی میں اضافے کی نشاندہی کرتی ہیں۔

  • مراقبہ کے لئے آنکھیں بند کرتا ہوں تو آنکھوں کے گوشوں میں دودھیا رنگ کی روشنی بکھرتی ہے۔ اس وقت یعنی مراقبہ کے دوران خیالات آتے ہیں اور گزر جاتے ہیں۔ کبھی نیند سی طاری ہو جاتی ہے اور کبھی صرف ’’اللہ‘‘ کا تصور ہوتا ہے۔ مراقبہ کے دوران اور بھی کئی رنگوں میں روشنی نظر آتی ہے۔ مثلاً نیلی، سرخ، سبز وغیرہ۔ اگر خیالات کی یلغار زیادہ ہو جائے تو میں دل ہی دل میں یا حیی یا قیوم کا ورد کرتا ہوں۔ مراقبہ کے بعد کئی حالتیں پیش آتی ہیں۔ کبھی جسم بھاری، کبھی بہت ہلکا ہو جاتا ہے۔ کبھی بالکل احساس نہیں ہوتا کہ میرا جسم کہاں ہے۔ کبھی یوں ہوتا ہے کہ میرا جسم اوپر اٹھ جاتا ہے۔ کبھی دماغ میں سرسراہٹ سی محسوس ہوتی ہے۔ اور ایسی ہی کچھ اور کیفیات مرتب ہوتی ہیں۔ مراقبہ کے دوران سرور انگیز لہریں دماغ کا احاطہ کرتی ہیں۔ دماغ پر مدہوشی چھا جاتی ہے اور اسی حالت میں نیند آ جاتی ہے۔ کبھی درمیان میں خواب جیسی کیفیت ہوتی رہتی ہے۔ ایک بار یوں ہوا کہ میں اڑتا ہوا اوپر اٹھ گیا۔ گرد و پیش کی کچھ خبر نہ رہی۔ مراقبہ کے دوران یوں گم ہونا چاہتا ہوں کہ سانس کی آمد و رفت بھی ناگوار گزرتی ہے۔ اس دوران استاد محترم کا تصور بھی آ جاتا ہے۔ کبھی کبھی مراقبہ کی حالت میں سو جاتا ہوں اور مختلف جگہوں کی سیر کرتا ہوں، یہ مناظر اس قدر حسین ہوتے ہیں کہ احاطہ تحریر میں لانا ممکن نہیں۔ بہرحال اس قسم کی کئی کیفیات ہوتی رہتی ہیں۔ (ہارون حمید۔ لاہور)
  • مراقبہ کے شروع میں سبزی مائل پیلی روشنی کا ایک نقطہ نظر آیا۔ پھر چارپائی اور خود کو ہلتا ہوا محسوس کیا۔ ذرا سی دیر کے لئے دائیں آنکھ کی طرف روشنی کی گول آنکھ نما چیز نظر آئی۔ مراقبہ شروع کرتے ہی سروزنی اور کندھے قدرے بوجھل محسوس ہوئے۔ جسم کا کھنچاؤ اوپر کی طرف محسوس ہوا۔ آنکھوں کے سامنے اندھیرے سائے نظر آئے۔ ایک دفعہ ذرا سا سرخ رنگ نظر آیا۔ کمر میں کچھ محسوس ہوتا ہوا سر کے پچھلے حصہ تک آیا۔ جسم میں خوشگوار تبدیلی محسوس ہوئی۔ جیسے کسی چیز کی کشش میں آ گیا ہوں۔ (مصباح الدین)
  • مراقبہ تقریباً 15منٹ تک کیا۔ تصور فوراً قائم ہو گیا، جسم کے تمام حصوں پر بارش کی بوندیں گرتے محسوس ہونے لگیں۔ سر پر تو ایسے لگ رہا تھا کہ جیسے بارش کی تیزی کے باعث گڑھے پڑ رہے ہوں۔ اس خیال میں اس قدر محو ہو گئی کہ جسم بے حس و حرکت محسوس ہو رہا تھا۔ دیکھا کہ شمال کی طرف ایک بہت بڑا دروازہ کھلا ہے اور اس دروازے سے سفید روشنی آ رہی ہے۔ یہ روشنی میرے جسم پر پڑ رہی ہے۔ پھر آسمان سے روشنیوں کی بارش برسنے لگی اور یہ بارش میرے جسم کے داہنے حصے پر محسوس ہو رہی ہے۔ یک دم اس بارش کی رفتار بڑھی اور روشنیاں اس شدت سے مجھ پر گریں کہ جسم میں جھٹکا محسوس ہوا۔
  • فجر کی نماز کے بعد مراقبہ کیا۔ دیکھا کہ میں مجسمۂ نور ہوں اور میرے ارد گرد نور کے ہالے خود بخود بن گئے اور روشنی خارج ہونے لگی۔ چنانچہ یہ میرے دو جسم ہیں ایک تو میں خود ہوں جو کہ سب کچھ دیکھ رہا ہوں اور دوسرا جو کہ پیکر نور ہے۔

اس کے علاوہ میں اپنے آپ میں چند تبدیلیاں محسوس کر رہا ہوں وہ یہ کہ اگر کوئی شخص مجھے مخاطب کرنا چاہتا ہے تو مجھے اس کا علم پہلے ہو جاتا ہے اور جو کچھ وہ کہنا چاہتا ہے۔ وہ بھی مجھے معلوم ہو جاتا ہے۔ دوسرے یہ کہ اگر میں چاہوں کہ فلاں شخص مجھ سے آ ملے یا مجھے اس سے ملنا چاہئے تو وہ بغیر کوشش کے مجھے مل جاتا ہے یعنی راستہ گزرتے ہوئے اور بعض اوقات کسی کام کے غرض سے مل جاتا ہے۔ تیسرے یہ کہ اگر کوئی خاص واقعہ ہونا ہو تو مجھے بے چینی محسوس ہونے لگتی ہے۔ (محمد اسلم گوہر۔ منگلا ڈیم)

یہ مضمون چھپی ہوئی کتاب میں ان صفحات (یا صفحہ) پر ملاحظہ فرمائیں: 148 تا 151

یہ تحریر English (انگریزی) میں بھی دستیاب ہے۔

مراقبہ کے مضامین :

ِ انتساب  ِ 1 - انفس و آفاق  ِ 2 - ارتکاز توجہ  ِ 3 - روحانی دماغ  ِ 4 - خیالات کی لہریں  ِ 5 - تیسری آنکھ  ِ 6 - فلم اور اسکرین  ِ 7 - روح کی حرکت  ِ 8.1 - برقی نظام  ِ 8.2 - تین کرنٹ  ِ 9.1 - تین پرت  ِ 9.2 - نظر کا قانون  ِ 10 - كائنات کا قلب  ِ 11 - نظریہ توحید  ِ 12.1 - مراقبہ اور مذہب  ِ 12.2 - تفکر  ِ 12.3 - حضرت ابراہیم ؑ  ِ 12.4 - حضرت موسیٰ ؑ  ِ 12.5 - حضرت مریم ؑ  ِ 12.6 - حضرت عیسیٰ ؑ  ِ 12.7 - غار حرا  ِ 12.8 - توجہ الی اللہ  ِ 12.9 - نماز اور مراقبہ  ِ 12.10 - ذکر و فکر  ِ 12.11 - مذاہب عالم  ِ 13.1 - مراقبہ کے فوائد  ِ 13.2 - شیزو فرینیا  ِ 13.3 - مینیا  ِ 14.1 - مدارج  ِ 14.2 - غنود  ِ 14.3 - رنگین خواب  ِ 14.4 - بیماریوں سے متعلق خواب  ِ 14.5 - مشورے  ِ 14.6 - نشاندہی  ِ 14.7 - مستقبل سے متعلق خواب  ِ 15.1 - لطیف احساسات  ِ 15.2 - ادراک  ِ 15.3 - ورود  ِ 15.4 - الہام  ِ 15.5 - وحی کی حقیقت  ِ 15.6 - کشف  ِ 16 - سیر  ِ 17 - فتح  ِ 18.1 - مراقبہ کی اقسام  ِ 18.2 - وضاحت  ِ 18.3 - عملی پروگرام  ِ 18.4 - اندازِ نشست  ِ 18.5 - جگہ اور اوقات  ِ 18.6 - مادی امداد  ِ 18.7 - تصور  ِ 18.8 - گریز  ِ 18.9 - مراقبہ اور نیند  ِ 18.10 - توانائی کا ذخیرہ  ِ 19.1 - معاون مشقیں  ِ 19.2 - سانس  ِ 19.3 - استغراق  ِ 20.1 - چار مہینے  ِ 20.2 - قوتِ مدافعت  ِ 20.3 - دماغی کمزوری  ِ 21 - روحانی نظریہ علاج  ِ 22.1 - رنگ روشنی کا مراقبہ  ِ 22.2 - نیلی روشنی  ِ 22.3 - زرد روشنی  ِ 22.4 - نارنجی روشنی  ِ 22.5 - سبز روشنی  ِ 22.6 - سرخ روشنی  ِ 22.7 - جامنی روشنی  ِ 22.8 - گلابی روشنی  ِ 23 - مرتبہ احسان  ِ 24 - غیب کی دنیا  ِ 25.1 - مراقبہ موت  ِ 25.2 - اعراف  ِ 25.3 - عظیم الشان شہر  ِ 25.4 - کاروبار  ِ 25.5 - علمائے سوء  ِ 25.6 - لگائی بجھائی  ِ 25.7 - غیبت  ِ 25.8 - اونچی اونچی بلڈنگیں  ِ 25.9 - ملک الموت  ِ 25.10 - مراقبہ نور  ِ 26.1 - کشف القبور  ِ 26.2 - شاہ عبدالعزیز دہلویؒ  ِ 27 - روح کا لباس  ِ 28.1 - ہاتف غیبی  ِ 28.2 - تفہیم  ِ 28.3 - روحانی سیر  ِ 28.4 - مراقبہ قلب  ِ 28.5 - مراقبہ وحدت  ِ 28.6 - ’’لا‘‘ کا مراقبہ  ِ 28.7 - مراقبہ عدم  ِ 28.8 - فنا کا مراقبہ  ِ 28.9 - مراقبہ، اللہ کے نام  ِ 28.10 - اسم ذات  ِ 29 - تصورشیخ  ِ 30 - تصور رسول علیہ الصلوٰۃ والسلام  ِ 31 - ذات الٰہی
سارے دکھاو ↓

براہِ مہربانی اپنی رائے سے مطلع کریں۔

    Your Name (required)

    Your Email (required)

    Subject (required)

    Category

    Your Message (required)