کہکشاں

کتاب : صدائے جرس

مصنف : خواجہ شمس الدّین عظیمی

مختصر لنک : https://iseek.online/?p=18384

یہ اس وقت کی بات ہے جب زمین پر آدم کا وجود نہیں تھا، زمین اپنے حدود اربعہ میں موجود تھی، زمین کی ساخت ایسی تھی کہ اس کی تقسیم در تقسیم یکساں تھی، وسعت بے کراں پر پھیلی ہوئی زمین طبقات پر مشتمل تھی، طبق در طبق زمین اس طرح پھیلی ہوئی تھی کہ زمین کے ہر حصے پر ایک ہی زمین کا گماں ہوتا تھا، ہر جگہ سطح زمین کے ساتھ ساتھ ندی، پہاڑ، آبشار اور برف پوش پہاڑیاں تھیں۔ زمین کی شمالی اور جنوبی ہیئت ایک جیسی تھی، ہر خطے کے شمال میں پہاڑ، بادل، جھیلیں، چشمے اور ٹھنڈک کا سماں تھا، اس کے برعکس جنوب میں جس کے کنارے مشرق و مغرب سے ملتے تھے، کھلے میدان، کھیت کھلیان اور باغات زمین کی رونق بنے ہوئے تھے۔ اگر اس صورتحال کو ماضی کے پیمانے سے ناپا جائے اور محدود شعور میں رہتے ہوئے وقت کا تعین کیا جائے تو یہ وقت لاکھوں سال اور کروڑوں سال پر محیط کہا جاتا ہے، لاکھوں، کروڑوں سالوں سے زمین اپنی آغوش پھیلائے ہوئے انسانوں کے لئے وقف ہے، سطح زمین پر مرقع آسمان کی روشن قندیلیں، کہکشانی جھرمٹیں بھی زمین کو زینت بخشنے میں اپنا کردار پورا کر رہی ہیں۔ زمین رنگ برنگ پھولوں سے اپنا سنگھار کر کے نوع انسانی کے لئے دلہن بنی ہوئی ہے اور یہ عمل لاکھوں کروڑوں سال سے جاری ہے اور نہیں معلوم کس وقت تک جاری رہے گا۔

کہا جاتا ہے کہ انتظار موت سے زیادہ سخت ہے۔ انتظار میں وقت کی نبض ڈوب ڈوب کر دوبارہ ابھرتی ہے۔ انتظار ایک ایسی کیفیت جس کیفیت میں کوئی بھی بندہ پہلے ناخوش ہوتا ہے، پھر بے زار ہوتا ہیاس کے بعد مایوسی کی انتہا کو پہنچ جاتا ہے، جب زمین اس کیفیت میں داخل ہوئی تو زمین کو پیدا کرنے والی ہستی کو رحم آیا، مایوس اور بے حال زمین کو مایوسی کے عمیق غاروں سے نکالنے کے لئے زمین کے مالک نے زمین کے محبوب آدم کو زمین پر بھیج دیا۔ یہ بھیجنا اس طرح عمل میں آیا کہ زمین کی کوکھ کھلی اور اس کوکھ میں سے معصوم اور کومل بچہ وجود میں آ گیا۔ جیسے بارش کے چھینٹے پڑنے سے زمین پر پھیلی ہوئی چکنی مٹی پھیل جاتی ہے اور زمین کی نظر نہ آنے والی دراڑوں سے بیر بہوٹی جنم لیتی ہے۔

جیسے بارش کی چھینٹیں زمین پر پڑنے سے ایک مخصوص گیس فضا میں اڑتی ہے اور اس مخصوص گیس سے بارش کے قطرے ہم جان ہوتے ہیں تو فضا سے مینڈک کے چھوٹے چھوٹے بچے زمین پر برستے ہیں۔ جیسے پودوں کے پتوں پر بارش برستی ہے تو پتوں میں موجود رگیں ٹڈے کی صورت اختیار کر لیتی ہیں اور ٹڈا اس پتے کا ہم شکل ہو کر ہوا میں اڑتا پھرتا ہے۔

قانون یہ ہے کہ جب جان سے جان ملتی ہے تو تیسری جان خدوخال بن جاتی ہے۔ آدم کی جان جب زمین کی جان سے ملی تو تیسری جان آدم کا شعور تخلیق ہوا اور اس شعور نے آدم ک و اسپیس میں رہنے پر مجبور کر دیا، آدم کی مجبوری اپنی جگہ لیکن زمین نے آدم کی خدمت گزاری میں کمی نہیں کی اور آدم کے لئے خورد و نوش کا انتظام کیا، آدم کے لئے روٹی اور اون کی شکل میں لباس فراہم کیا، آدم کے لئے اپنا دامن پھیلا کر دھوپ سمیٹی، آدم کے لئے سرپر سیاہ پلو لے کر ٹھنڈی، میٹھی، مسرور و مخمور، شاعرانہ تخیل کے ساتھ چاند کی چاندنی کو اپنے اوپر پھیلا لیا۔ اپنے اوپر سایہ دار درختوں کو پہریدار بنایا، نرم و نازک اور دبیز گھاس کو قالین بنا کر اپنے اوپر بچھا دیا۔

انسان کی ساری زندگی اور غلاظت کو زندگی میں چھپایا اور مرنے کے بعد بھی انسان کو بے حرمت نہیں ہونے دیا۔ دیکھنا یہ ہے کہ انسان نے اپنی محسن زمین کے احسانات کا کیا بدلہ چکایا؟ پانچ ہزار سال کی تاریخ سے زیادہ انسان کچھ نہیں جانتا اور پانچ ہزار سال کی تاریخ میں بھی اسی سے نوے فی صد قیاس آرائی شامل ہے، بہرحال انسان کی خود نوشت تاریخ پر اگر غور کیا جائے تو ظلم و بربریت، جبر و تشدد کے علاوہ انسان نے زمین کو اور کچھ نہیں دیا جس طرح ایک اچھا ڈاکٹر آپریشن کر کے وہ اعضاء نکال دیتا ہے جو اعضاء پورے جسم کو ناکارہ کر دیتے ہیں، زمین نے بھی انسانی قیاس کے مطابق سترہ اٹھارہ مرتبہ انسان کے مفلوج اور زہریلے جسم کو نابود کر کے اپنے اندر محفوظ کر لیا اور پھر ماں کی مامتا کے ساتھ زمین نے انسانوں کی پرورش دوبارہ شروع کر دی، یہ سلسلہ جاری ہے، جاری رہے گا، کب تک جاری رہے گا، یہ بات زمین بھی نہیں جانتی۔

زمین ہم سب کی ماں ہے،

یہ ماں ہماری ہر ضرورت کی کفالت کرتی ہے،

یہ ماں ہماری تربیت کر کے ہمیں شعور بخشتی ہے۔

زمین نے آدم کو آگ کے استعمال کا شعور بخشا، پھر اس شعور میں اچھائی اور برائی کا تصور منتقل کیا، اچھائی اور برائی کے تصور کو قائم رکھنے کے لئے وسائل استعمال کئے، مثلاً اگر شعور میں یہ بات راسخ ہو گئی کہ ستر پوشی ضروری ہے زمین نے ستر پوشی کے لئے کپڑا بنانے کی چیزیں مہیا کیں، شعور میں ارتقاء ہوا کہ علم کی افادیت ہے اور علم کی بنیاد پر ہی آدم زاد حیوانات سے ممتاز ہو سکتا ہے تو زمین نے اپنے اندر مخفی صلاحیتوں کو اس طرح ظاہر کر دیا کہ آدم زاد علم سیکھ سکے۔

انسان اور زمین کے رشتے پر غور کیا جائے تو اس بات سے چھ ارب آدمیوں میں سے ایک آدمی بھی انکار نہیں کر سکتا کہ زمین نے ہر ہر قدم پر آدم کی مدد کی ہے، زمین آج بھی یہ چاہتی ہے کہ زمین پر بسنے والی اس کی اولادوں میں سے ایک ممتاز اولاد آدم خوش رہے، خوشی دینے کے لئے زمین انسان سے کوئی قیمت طلب نہیں کرتی، انسان بھی دوسروں سے توقع قائم کرنے کے بجائے زمین کی طرح دوسروں کی مفت خدمت کو اپنا شعار بنالے تو انسانی زندگی مسرت و شادمانی، خوشی اور سکون، راحت و آرام اور مخمور زندگی کا گہوارہ بن جائے گی۔

حضور قلندر بابا اولیاءؒ فرماتے ہیں:

شمع جب اپنے وجود میں دوڑنے والی انرجی کو دوسروں کے لئے جلاتی ہے تو دوسروں کی روشنی کا انعکاس ملتا ہے، اندھیرا چھٹ جاتا ہے، ماحول روشن و منور ہو جاتا ہے، آدمی کا چہرہ ایک دوسرے کا آئینہ بن جاتا ہے، اس کے برعکس اگر انسان کے اندر شمع کا ایثار موجود نہیں ہوتا اور شمع خود کو پگھلا کر اپنی توقعات منقطع نہیں کرتی تو اندھیرا گھپ اندھیرا بن جاتا ہے، تاریکی چھا جاتی ہے، راستہ نہیں ملتا، مسافر بھٹکتا رہتا ہے اور بالآخر مر جاتا ہے۔

یہ مضمون چھپی ہوئی کتاب میں ان صفحات (یا صفحہ) پر ملاحظہ فرمائیں: 127 تا 129

صدائے جرس کے مضامین :

ِ انتساب  ِ عرضِ ناشر!  ِ 1 - حیات و موت  ِ 2 - تصوف  ِ 3 - اللہ کی رسی  ِ 4 - حکمرانی  ِ 5 - نفی  ِ 6 - آنکھیں  ِ 7 - حضرت مریمؑ  ِ 8 - محبوب بغل میں  ِ 9 - دولت پرستی  ِ 10 - مالک الملک  ِ 11 - اشرف المخلوقات  ِ 12 - دل کی باتیں  ِ 13 - طرز فکر  ِ 14 - روپ بہروپ  ِ 15 - مساجد  ِ 16 - لیلۃ القدر  ِ 17 - حوا  ِ 18 - زمین کی پکار  ِ 19 - نورانی پیکر  ِ 20 - روشنی قید نہیں ہوتی  ِ 21 - اے واعظو! اے منبر نژینو!  ِ 22 - علم و عمل  ِ 23 - روحانیت  ِ 24 - اسوۂ حسنہ  ِ 25 - اولیاء اللہ کی طرز فکر  ِ 26 - ایثار کی تمثیلات  ِ 27 - درخت زندگی ہیں  ِ 28 - صلوٰۃ کا مفہوم  ِ 29 - پانی کی فطرت  ِ 30 - مخلوقات  ِ 31 - شک  ِ 32 - خود آگاہی  ِ 33 - روشن چراغ  ِ 34 - کہکشاں  ِ 35 - ماضی  ِ 36 - عقل و شعور  ِ 37 - بارش  ِ 38 - احسن الخالقین  ِ 39 - نو کروڑ میل  ِ 40 - پیغمبرانہ طرز فکر  ِ 41 - رزاق  ِ 42 - خیالات  ِ 43 - عروج و زوال  ِ 44 - مخلوق کی خدمت  ِ 45 - معجزہ  ِ 46 - بغدادی قاعدہ  ِ 47 - سوچ  ِ 48 - شق القمر  ِ 49 - اندر کی آنکھ  ِ 50 - سچا مذہب  ِ 51 - دو یونٹ  ِ 52 - شعور لا شعور  ِ 53 - توانائی  ِ 54 - سلطان  ِ 55 - وجدانی دماغ  ِ 56 - حاتم طائی  ِ 57 - احسن تقویم  ِ 58 - عامل اور معمول  ِ 59 - گھر گھر دستک  ِ 60 - پرندے  ِ 61 - بجلی آگئی  ِ 62 - روٹی  ِ 63 - اللہ کا نظام  ِ 64 - ایٹم بم  ِ 65 - دائرہ اور مثلث  ِ 66 - دنیا کی کہانی
سارے دکھاو ↓

براہِ مہربانی اپنی رائے سے مطلع کریں۔

    Your Name (required)

    Your Email (required)

    Subject (required)

    Category

    Your Message (required)