یہ تحریر 简体中文 (چائینیز) میں بھی دستیاب ہے۔

نماز مومن کی معراج

کتاب : روحانی نماز

مصنف : خواجہ شمس الدین عظیمی

مختصر لنک : http://iseek.online/?p=6042

نماز اس مخصوص عبادت کا نام ہے جس میں بندے کا اپنے خالق کے ساتھ براہ راست ایک ربط اور تعلق قائم ہو جاتا ہے۔ نماز ارکان اسلام میں وہ رکن ہے جسے کوئی باہوش و حواس مسلمان کسی حالت میں نہیں چھوڑ سکتا۔ قرآن پاک میں تقریباً سو جگہ نماز کے قیام کی تاکید کی گئی ہے جس سے اس اہم اسلامی رکن کی فضیلت، عظمت و جلالت اور اہمیت کا بخوبی اندازہ ہوتا ہے۔ عبادات میں نماز کو ایک مرکزی حیثیت حاصل ہے۔ یہ بندے کو ایک ایسی روحانی کیفیت سے آشنا کرتی ہے جس سے بندہ اپنی اور اپنے ماحول میں موجود ہر چیز کی نفی کر کے اللہ تعالیٰ کی حضوری حاصل کرتا ہے۔ نماز انسان کے باطنی حواس کے لئے ایک پاسبان کی حیثیت رکھتی ہے اور لوگوں میں اجتماعی نظم و ضبط کی تشکیل کرتی ہے۔ نماز کے اخلاقی، تمدنی، معاشرتی، جسمانی و روحانی بے شمار فوائد ہیں۔ اجتماعی نماز کی پابندی باہمی تعلقات میں استحکام پیدا کرتی ہے۔ صلوٰۃ (نماز) عربی زبان کا لفظ ہے۔ اس کے معنی دعا، تسبیح، استغفار، رحمت، تعریف اور طلب رحمت کے ہیں۔ نماز کے معنی تعظیم کے بھی ہیں۔ یعنی صلوٰۃ اس عبادت کا نام ہے جس میں اللہ تعالیٰ کی بڑائی اور تعظیم بیان کرنا مقصود ہے۔ نماز کو ٹھیک طریقہ پر ادا کرنا اولین رکن دین ہے۔ قبولیت نماز سے دین و دنیا کی ساری سربلندیاں حاصل ہو جاتی ہیں۔

اللہ تعالیٰ نے قرآن پاک میں ارشاد فرمایاہے:

“یہ ایسی کتاب ہے جس میں کسی شک و شبہ کی گنجائش نہیں۔ ان لوگوں کو ہدایت بخشتی ہے جو متقی ہیں اور متقی وہ لوگ ہیں جو غیب پر یقین رکھتے ہیں اور قائم کرتے ہیں صلوٰۃ اور جو کچھ ہم نے دے رکھا ہے انہیں، اس میں سے خرچ کرتے ہیں۔ “( سورۂ بقرہ)
اللہ تعالیٰ کے ارشاد کے مطابق نماز بندے کو منکرات اور فواحشات سے روکتی ہے۔ نماز کے بارے میں خالق کائنات کا فرمان یہ بھی ہے:
“اور وہ لوگ جو نمازی ہیں اور اپنی نمازوں سے بے خبرہیں ایسی نمازیں ان کے اپنے لئے ہلاکت اور بربادی بن جاتی ہیں۔”

(سورۂ الماعون)

سیدنا حضور علیہ الصلوٰۃ والسلام کا ارشاد ہے:

اللہ تعالیٰ نے فرمایا۔ “میں نے تمہاری امت پر پانچ نمازیں فرض کی ہیں اور میں نے اس کا ذمہ لے لیا ہے کہ جو شخص ان پانچ نمازوں کو ان کے وقت پر ادا کرنے کا اہتمام کرے اس کو میں اپنی ذمہ داری پر جنت میں داخل کروں گا۔”

آدمی جب نماز کے لئے قیام کرتا ہے تو جنت کے دروازے کھل جاتے ہیں۔ نمازی اور اللہ تعالیٰ کے درمیان حائل پردے ہٹ جاتے ہیں۔

نماز مومن کا نور ہے۔

سجدہ کی حالت میں نمازی کا سر اللہ تعالیٰ کے قدموں میں ہوتا ہے۔

نماز مومنوں کی معراج ہے۔

دنیا کے ہر آسمانی مذہب میں خدا کی یاد کا حکم اور اس یاد کے لئے قوانین موجود ہیں۔ اسلام میں اگر حمد و تسبیح ہے تو یہودیوں میں مزمور، عیسائیوں میں دعا، پارسیوں میں زمزمہ اور ہندوؤں میں بھجن ہیں اور دن رات میں اس فریضہ کے ادا کرنے کے لئے ہر ایک میں اوقات کا تعین بھی ہے۔ نماز یہی وجہ ہے کہ اعمال میں ایک ایسا عمل ہے جس پر دنیا کے مذاہب متفق ہیں۔ قرآن پاک کی تعلیم کے مطابق ہر پیغمبر نے اپنی امت کو صلوٰۃ قائم کرنے کی تعلیم دی ہے اور اس کی تاکید کی ہے۔ ملت ابراہیمی میں اس کی حیثیت بہت ممتاز ہے۔ حضرت ابراہیم علیہ السلام نے جب اپنے صاحبزادے حضرت اسماعیل علیہ السلام کو مکہ کی ویران سر زمین میں آباد کیا تو اس کی غرض یہ بتائی کہ:

رَبَّنَا لِیُقِیْمُوا الصَّلٰوۃ (سورۂ ابراہیم۔ آیت ۳۷)

“اے ہمارے پروردگار تا کہ وہ صلوٰۃ قائم کریں۔”

حضرت ابراہیم علیہ السلام نے اپنی اور اپنی نسل کے لئے یہ دعا کی:

رَبِّ اجْعَلْنِیْ مُقِیْمَ الصَّلوٰۃ وَ مِنْ ذُرِّیَّتِیْ (سورہ ابراہیم۔ آیت ۴۰)

اے میرے پروردگار! مجھ کو اور میری نسل میں سے لوگوں کو صلوٰۃ قائم کرنیوالا بنا۔

حضرت اسماعیل علیہ السلام کے بارے میں قرآن پاک کا ارشاد ہے۔

وَکَانَ یَامُرُ اَھْلَہٗ بِالصَّلوٰۃِ (سورہ مریم۔ آیت ۵۵)

“اور وہ اپنے اہل و عیال کو صلوٰۃ کا حکم دیتے تھے۔”

حضرت لُوط علیہ السلام، حضرت اسحاق علیہ السلام، حضرت یعقوب علیہ السلام اور ان کی نسل کے پیغمبروں کے متعلق قرآن کہتا ہے:

وَ اَوْ حَیْنَا اِلَیْھِمْ فعلَ الْخَیْرتِ وَ اقَّامَ الصَّلوٰۃ۔ سورۂ انبیاء۔ آیت ۷۳

“اور ہم نے ان کو نیک کاموں کے کرنے اور صلوٰۃ قائم کرنے کی وحی کی۔”

حضرت لقمان علیہ السلام نے اپنے لخت جگر کو یہ نصیحت فرمائی:

یَا بُنَیَّ اَقِمِ الصَّلوٰۃَ۔ سورۂ لقمان۔ آیت ۱۷

“اے میرے بیٹے! صلوٰۃ قائم کر۔”

اللہ تعالیٰ نے حضرت موسیٰ علیہ السلام سے فرمایا:

وَاَقِمِ الصَّلوٰۃَ لِذِکْرِیْ۔ سورۂ طٰہٰ۔ آیت ۱۴

“اور میری یاد کے لئے صلوٰۃ قائم کر۔”

حضرت موسیٰ اور ہارون علیہم السلام کو اور ان کے ساتھ بنی اسرائیل کو حکم ہوتا ہے:

وَاَقِیْمُو الصَّلوٰۃ۔ سورۂ یونس۔ آیت۷

“اور صلوٰۃ قائم کرو۔”

حضرت عیسیٰ علیہ السلام کہتے ہیں:

وَ اَوْ صٰنِیْ بِالصَّلوٰۃِ سورۂ مریم۔ آیت ۳۱

“اور خدا نے صلوٰۃ کا حکم دیا ہے۔”

قرآن سے یہ بھی ثابت ہوتا ہے کہ اسلام کے زمانے میں بھی عرب میں بعض یہود اور عیسائی قائم الصلوٰۃ تھے۔

ارشاد ہے:

مِنْ اَھْلِ الْکِتَابِ اُمَّہٌ قَاءِمَۃٌ یَتْلُونَ اٰیْتِ اللّٰہِ اٰنَآءَ الَّیْلِ وَھُمْ یَسْجُدُوْنَ

سورۂ آل عمران۔ آیت۱۱۳

“اہل کتاب میں کچھ لوگ ایسے بھی ہیں جو راتوں کو کھڑے ہو کر خدا کی آیتیں پڑھتے ہیں اور وہ سجدہ کرتے ہیں۔”

وَالَّذِیْنَ یُمَسِّکُونَ بِالْکِتٰبِ وَاَقَامُوا الصَّلوٰۃَ اِنَّا لَانُضِیْعُ اَجْرَالْمُصْلِحِیْنَ

سورۂ اعراف۔ آیت ۱۷۰

“اور جو لوگ محکم پکڑتے ہیں کتاب کو اور قائم رکھتے ہیں صلوٰۃ کو۔ ہم ضائع نہیں کرتے اجر نیکی کرنے والوں کے۔”

یہ مضمون چھپی ہوئی کتاب میں ان صفحات (یا صفحہ) پر ملاحظہ فرمائیں: 13 تا 18

یہ تحریر 简体中文 (چائینیز) میں بھی دستیاب ہے۔

روحانی نماز کے مضامین :

ِ انتساب  ِ انکشاف  ِ 1 - نماز مومن کی معراج  ِ 2 - نماز کی روحانی غرض و غایت  ِ 3 - عقیدہ  ِ 4 - پڑھنا اور قائم کرنا نماز  ِ 5 - نماز اور آتش پرست  ِ 6 - انبیاء علیہم السلام کی طرزِ فکر  ِ 7 - اُمّت کیلئے پروگرام  ِ 8 - آدم و حوّا  ِ 9 - شعور اور لاشعور  ِ 10 - نماز اور معراج  ِ 11 - عاشق و محبوب کی نماز  ِ 12 - حضور علیہ الصلوٰۃ والسلام کی نماز  ِ 13 - حضرت ابوبکرصدیقؓ کی نماز  ِ 14 - حضرت عمرؓ کی نماز  ِ 15 - حضرت علیؓ کی نماز  ِ 16 - حضرت حسنؓ کی نماز  ِ 17 - حضرت انسؓ کی نماز  ِ 18 - حضرت عبداللہ بن زبیرؓ کی نماز  ِ 19 - حضرت اویس قرنیؓ کی نماز  ِ 20 - حضرت زین العابدینؓ کی نماز  ِ 21 - حضرت رابعہ بصریؓ کی نماز  ِ 22 - حضرت سُفیان ثوریؒ کی نماز  ِ 23 - حضرت مسلم بن بشارؒ کی نماز  ِ 24 - ایک عورت کی نماز  ِ 25 - ایک بزرگ کی نماز  ِ 26 - نماز دُکھوں کا علاج  ِ 27 - نماز میں خیالات کی یلغار  ِ 28 - اذان کی علمی توجیہہ  ِ 29 - وضو اور سائنس  ِ 30 - ہاتھ دھونا  ِ 31 - کُلّی کرنا  ِ 32 - ناک میں پانی ڈالنا  ِ 33 - چہرہ دھونا  ِ 34 - کہنیوں تک ہاتھ دھونا  ِ 35 - مسح کرنا  ِ 36 - گردن کا مسح  ِ 37 - پیروں کا مسح کرنا یا دھونا  ِ 38 - نماز ادا کرنے کا صحیح طریقہ  ِ 39 - ارکان نماز کی سائنسی توجیہہ  ِ 40 - نیت باندھنا  ِ 41 - سینہ پر ہاتھ باندھنا  ِ 42 - رکوع  ِ 43 - سجدہ اور ٹیلی پیتھی  ِ 44 - جلسہ  ِ 45 - سلام  ِ 46 - دعا مانگنے کا طریقہ  ِ 47 - نماز میں رکعتوں کی تعداد  ِ 48 - اوقات نماز میں تعین کی اہمیت و حکمت  ِ 49 - فجر کی نماز  ِ 50 - ظہر کی نماز  ِ 51 - عصر کی نماز  ِ 52 - مغرب کی نماز  ِ 53 - عشاء کی نماز  ِ 54 - خواب میں پیش گوئیاں  ِ 55 - تہجد کی نماز  ِ 56 - نمازِ جمعہ  ِ 57 - نماز اور جسمانی صحت  ِ 58 - ہائی بلڈ پریشر کا علاج  ِ 59 - گٹھیا کا علاج  ِ 60 - جگر کے امراض  ِ 61 - پیٹ کم کرنے کیلئے  ِ 62 - السر کا علاج  ِ 63 - جملہ دماغی امراض  ِ 64 - چہرہ پر جھریاں  ِ 65 - جنسی امراض  ِ 66 - سینہ کے امراض  ِ 67 - چھ کلمے  ِ 68 - اذان  ِ 69 - اذان کے بعد کی دعا  ِ 70 - وضو کے مسائل  ِ 71 - تیمّم کے مسائل  ِ 72 - غسل کے مسائل  ِ 73 - خواتین کا غسل  ِ 74 - نماز کے مسائل  ِ 75 - فرض، واجب، سنت اور نفل  ِ 76 - اوقات نماز  ِ 77 - مُفسداتِ نماز  ِ 78 - سجدۂ سہو  ِ 79 - قضا نمازیں  ِ 80 - طریقۂ نماز  ِ 81 - نماز کے بعد کی دعا  ِ 82 - آیت الکُرسی  ِ 83 - نماز کے بعد کی تسبیحات  ِ 84 - دعائے قنوت  ِ 85 - تراویح کی تسبیح  ِ 86 - عورت اور مرد کی نماز کا فرق  ِ 87 - نفل نمازیں  ِ 88 - عیدین کی نماز کے مسائل  ِ 89 - صدقۂ فطر کا بیان  ِ 90 - بقر عید کے مسائل  ِ 91 - قربانی کے مسائل  ِ 92 - نمازِ عیدین  ِ 93 - مسافر کی نماز  ِ 94 - زکوٰۃ کے مسائل  ِ 95 - عقیقہ کے مسائل  ِ 96 - قرآن پڑھنے کے آداب  ِ 97 - سجدۂ تلاوت کے مسائل  ِ 98 - نماز جنازہ کے مسائل  ِ 99 - نماز جنازہ  ِ 100 - قبرستان میں پڑھنے کی دعائیں  ِ 101 - ثواب پہنچانے کا طریقہ  ِ 102 - اللہ پاک کے نام  ِ 103 - اسمائے الٰہی  ِ 104 - جنات کی نوع کا اسم اعظم الگ ہے  ِ 105 - گیارہ ہزار اسمائے الٰہیہ  ِ 106 - اجازت  ِ 107 - احساس کمتری کا علاج  ِ 108 - آنکھوں میں روشنی  ِ 109 - ہر دل عزیز ہونے کا طریقہ  ِ 110 - مقدمہ میں کامیابی  ِ 111 - سعادت مند اولاد  ِ 112 - ہر قسم کی بیماری سے نجات  ِ 113 - محبت والا شوہر  ِ 114 - غیبی انکشافات  ِ 115 - ملازمت میں ترقی  ِ 116 - کمزور بچے  ِ 117 - کاروبار میں ترقی  ِ 118 - آسیب سے نجات  ِ 119 - پڑھنے میں دل نہ لگنا  ِ 120 - عقیدہ کی کمزوری  ِ 121 - وسائل میں اضافہ  ِ 122 - سخت گیر حاکم کی تسخیر  ِ 123 - دشمن پر غلبہ  ِ 124 - سفر میں آسانی  ِ 125 - رضائے الٰہی  ِ 126 - حسب منشاء شادی  ِ 127 - استخارہ  ِ 128 - افلاس سے بچنے کیلئے  ِ 129 - رزق میں فراوانی  ِ 130 - دوران سفر آسانیاں  ِ 131 - عزت و مرتبہ میں اضافہ  ِ 132 - چوری اور ڈکیتی سے حفاظت  ِ 133 - سر میں درد  ِ 134 - زہریلے جانور کا کاٹنا  ِ 135 - صلح و صفائی کے لئے  ِ 136 - کشف القبور  ِ 137 - تجلی کا انکشاف  ِ 138 - مایوسی کا خاتمہ  ِ 139 - حاملہ کی حفاظت  ِ 140 - دودھ میں کمی  ِ 141 - اللہ کے دوست  ِ 142 - وسوسوں اور بُری عادتوں سے نجات  ِ 143 - وقت سے پہلے پیدائش  ِ 144 - بچوں کا گم ہو جانا  ِ 145 - شوہر کو راہ راست پر لانے کیلئے  ِ 146 - ہائی بلڈ پریشر کا علاج  ِ 147 - روشن ضمیر  ِ 148 - خوف و غم سے نجات  ِ 149 - توبہ کی قبولیت  ِ 150 - غیبی مدد  ِ 151 - عدم تحفظ کا احساس  ِ 152 - اولاد نرینہ  ِ 153 - عزت و توقیر  ِ 154 - پُرکشش آنکھیں  ِ 155 - فرشتوں سے ہمکلامی  ِ 156 - ایّام کی خرابی  ِ 157 - بچوں کو نظر لگنا  ِ 158 - احساس برتری  ِ 159 - گناہوں سے نفرت  ِ 160 - غصہ کے وقت  ِ 161 - رخصتی کے وقت  ِ 162 - اپیل میں کامیابی  ِ 163 - حافظہ کمزور ہونا  ِ 164 - بچھڑے ہوئے رشتہ دار  ِ 165 - میاں بیوی میں اختلاف  ِ 166 - شادی میں رکاوٹ  ِ 167 - ایکسیڈنٹ سے حفاظت  ِ 168 - انوارِ الٰہی  ِ 169 - معرفت حق  ِ 170 - گھر میں خیر و برکت  ِ 171 - نیکی کا پیکر  ِ 172 - اچھی بیوی
سارے دکھاو ↓

براہِ مہربانی اپنی رائے سے مطلع کریں۔

Your Name (required)

Your Email (required)

Subject

Category

Your Message