مناسکِ حج

کتاب : رُوحانی حج و عُمرہ

مصنف : خواجہ شمس الدین عظیمی

مختصر لنک : http://iseek.online/?p=14691

ایک ضعیف العمر صاحب مدراس سے باباصاحبؒ کے پاس آئے اور کہا۔’’حضور! آپ کے پاس راجہ، نواب، اور صاحبِ حیثیت لوگ بھی آتے ہیں۔ کسی سے اتنی رقم دلوادیجئے کہ میں حج بیت االلہ کی سعادت حاصل کر لوں۔ یہ میری سب سے بڑی خواہش ہے۔‘‘

باباصاحبؒ نے انہیں اطمینان دلایا۔ دن گزرتے گئے۔ یہاں تک کہ حج پر جانے کا وقت قریب آگیا۔ ان صاحب نے دوبارہ عرض کیا۔ بابا صاحب خاموش رہے۔ اسی  خاموشی میں حج پر جانے کا وقت بھی گزر گیا۔ یہ صاحب نہایت مضطرب اوربے چین حج سے ایک روز پہلے باباصاحبؒ کی خدمت میں آئے اورعرض کیا۔’’حضور کل سے حج شروع ہوجائے گا لیکن آپ نے حج پر جانے میں میری کوئی مدد نہیں کی۔‘‘

اگلے دن باباصاحبؒ حسبِ معمول باہر نکلے تو ان صاحب نے دوبارہ اپنی بے چینی اورمحرومی کا ذکر کیا۔ باباصاحبؒ نے ان کا ہاتھ پکڑا اورکچھ دورلے جاکر ایک جگہ پر بیٹھا دیا۔ بیٹھے بیٹھے ان صاحب کی پلکیں بوجھل ہوگئیں اور وہ وہیں لیٹ گئے۔ کیا دیکھتے ہیں کہ وہ مکّہ میں موجود ہیں اور حاجیوں کے ساتھ مناسکِ حج ادا کر رہے ہیں۔ وہیں پڑے پڑے انہوں نے تمام مناسکِ حج ادا کرتے خود کو دیکھا۔ حج کا وقت ختم ہوا توبابا صاحبؒ وہاں پہنچے اور ان سے کہا۔’’کیا یہیں پڑا رہے گا؟‘‘

ضعیف العمر صاحب کے پپوٹوں میں حرکت ہوئی اور وہ اٹھ کر مستانہ وار باباصاحبؒ کے ساتھ ہولئے۔ یہ ضعیف العمر مدراسی صاحب بعد میں ’’نانا‘‘ کے نام سے مشہور ہوئے اور آخر وقت تک تاج آباد میں رہے۔

اس کرامت کے اصول کو سمجھنے کے لئے ہمیں خواب اور بیداری کا مختصر جائزہ لینا ہوگا۔ ہم اپنی پوری زندگی دوحواس میں گزارتے ہیں۔ ایک خواب اور دوسرے بیداری۔ خواب اور بیداری، ہماری زندگی دوحالتوں میں سفر کرتی رہتی ہے۔ فرق صرف حواس کی نوعیت میں ہوتا ہے۔ االلہ تعالیٰ کا ارشاد ہے:

’’اللہ رات(خواب) کو داخل کرتاہے دن (بیداری )میں اور دن کو داخل کرتاہے رات میں۔ زندگی کو موت سے نکالتاہے اور موت کو زندگی سے نکالتاہے۔‘‘

رات کے حواس میں مکانی اورزمانی فاصلے مردہ ہوجاتے ہیں لیکن دن کے حواس میں یہی فاصلے زندہ ہوجاتے ہیں۔

زید خواب دیکھتا ہے کہ وہ اپنے ایک دوست سے باتیں کررہا ہے حالانکہ اس کا دوست دور دراز فاصلے پر رہتاہے۔ خواب میں زید کو یہ احساس بالکل نہیں ہوتا کہ اس کے اوردوست کے درمیان کوئی فصل ہے۔ ایسے خواب میں مکانی فاصلے صفر ہوتے ہیں۔ اس ہی طرح زید گھڑی دیکھ کر رات کے ایک بجے سوتا ہے۔ خواب میں ایک ملک سے دوسرے ملک تک ہفتوں اورمہینوں کے فاصلہ کا سفر کرتا ہے، راستے میں اور منزل پر قیام بھی کرتاہے، ایک طویل مدّت گزارنے کے بعد گھر واپس آتاہے۔ آنکھ کھلتے ہی گھڑی دیکھتا ہے۔ اب بھی ایک ہی بجا ہے۔ اس قسم کے خواب میں زمانی فاصلہ صفر ہوتاہے۔ رات کے حواس میں جو فاصلے مردہ ہوجاتے ہیں، وہی فاصلے دن کے حواس میں زندہ ہوجاتے ہیں۔

بیداری ہویا خواب دونوں حالتوں میں ہمارے اعمال مشترک ہوتے ہیں۔ کوئی ایسا کام ہے جو ہم بیداری میں کرتے ہوں اور خواب میں نہ کرتے ہوں ۔ فرق صرف حواس کی نوعیت کا ہے۔

دوسری اہم بات یہ ہے کہ ہم خواب کی حالت میں بے اختیار ہوجاتے ہیں اگر کسی طرح ہم خواب کے حواس کو استعمال کرنا سیکھ جائیں جیسا کہ ہم بیداری کے حواس کو استعمال کرنا جانتے ہیں تو ہم زمان ومکان سے آزاد ہوکر حسبِ منشاء کام انجام دے سکتے ہیں۔ انبیائے کرام کے اندر یہ صلاحیت بدرجۂ کمال موجود ہوتی تھی۔ یہی وجہ ہے کہ ان کے خواب اوربیداری میں فرق نہیں ہوتا تھا۔ چنانچہ حدیث شریف میں آتاہے کہ انبیاء سوتے ہیں لیکن ان کا قلب جاگتا رہتاہے۔

جب حج کے متمنی شخص نے ضد کی تو باباصاحبؒ نے تصرف کے ذریعے اس کی بیداری کی حالت کو خواب میں منتقل کر دیا اور جسمِ خاکی کے ساتھ وہاں موجود نہ ہونے کے باوجود زمان ومکان سے آزاد ہوکر مناسکِ حج پورے کئے۔

یہ مضمون چھپی ہوئی کتاب میں ان صفحات (یا صفحہ) پر ملاحظہ فرمائیں: 79 تا 82

رُوحانی حج و عُمرہ کے مضامین :

ِ 1.1 - مکہ بحیثیت مرکز  ِ 1.2 - امیرِ حج  ِ 1.3 - انبیائے کرامؑ کی قبور  ِ 1.8 - غُسلِ کعبہ  ِ 1.11 - رُکن یمانی  ِ 1.4 - مکہ کے نام  ِ 1.9 - حجرِاسود  ِ 1.16 - فضائلِ حج  ِ 1.5 - بیت اللہ شریف کے نام  ِ 1.6 - مسجد الحرام  ِ 1.10 - ملتزم  ِ 1.7 - مقاماتِ بیت الحرام  ِ 1.12 - میزاب  ِ 1.13 - حطیم  ِ 1.13 - حطیم  ِ 1.14 - مقامِ ابراہیمؑ  ِ 1.15 - زم زم  ِ 1.12 - میزاب  ِ 1.8 - غُسلِ کعبہ  ِ 2.2 - عُمرہ  ِ 2.6 - طواف کی مکمل دعائیں اور نیت  ِ 2.7 - مقام مُلتزم پر پڑھنے کی دعا  ِ 2.10 - سعی کے سات پھیرے اور سات خصوصی دعائیں  ِ 2.14 - ۹ ذی الحجہ ۔ حج کا دوسرا دن  ِ 2.15 - وقوفِ عرفات  ِ 2.17 - ۱۰ذی الحجہ۔۔۔حج کا تیسرا دن  ِ 2.21 - دربارِ رسالتﷺ کی فضیلت  ِ 2.3 - زم زم  ِ 2.11 - مناسکِ حج  ِ 2.1 - حج اور عمرے کا طریقہ  ِ 2.19 - ۱۲ذی الحجہ۔۔۔حج کا پانچواں دن  ِ 2.4 - سعی صفا و مروہ  ِ 2.5 - سعی کا آسان طریقہ  ِ 2.8 - مقام ابراہیمؑ کی دعا  ِ 2.9 - سعی کی مکمل دعائیں اور نیت  ِ 2.12 - ایامِ حج  ِ 2.13 - 8 ذی الحجہ۔ حج کا پہلا دن  ِ 2.16 - عرفات سے مزدلفہ روانگی  ِ 2.18 - ۱۱ذی الحجہ۔۔۔حج کا چوتھا دن  ِ 2.20 - طوافِ وِداع  ِ 3.4 - طواف کی حکمت  ِ 3.8 - چالیس نمازیں ادا کرنے کی حکمت، حکمتِ طواف، حدیث مبارک  ِ 3.1 - ارکان حج و عمرہ کی حکمت  ِ 3.2 - کنکریاں مارنے کی حکمت  ِ 3.3 - سعی کی حکمت  ِ 3.5 - حلق کرانے کی حکمت  ِ 3.6 - احرام باندھنے کی حکمت  ِ 3.7 - آب زم زم کی حکمت  ِ 4.6 - حضرت ابو یزیدؒ  ِ 4.15 - حضرت ابو سعید خزازؒ  ِ 4.23 - خواجہ معین الدین چشتیؒ  ِ 4.27 - ڈاکٹر نصیر احمد ناصر  ِ 4.33 - حضرت حاتم اصمؒ  ِ 4.43 - حضرت داتا گنج بخشؒ  ِ 4.47 - حضرت خواجہ محمد معصومؒ  ِ 4.1 - مشاہدات انوار و تجلیات  ِ 4.2 - مشاہدات و کیفیات – حضرت امام باقرؒ  ِ 4.4 - مشاہدات و کیفیات – شیخ اکبر ابن عربیؒ  ِ 4.7 - حضرت عبداللہ بن مبارکؒ  ِ 4.9 - صوفی ابو عبداللہ محمدؒ  ِ 4.10 - حضرت احمد بن ابی الحواریؒ  ِ 4.11 - شیخ نجم الدین اصفہانیؒ  ِ 4.13 - شیخ حضرت یعقوب بصریؒ  ِ 4.14 - حضرت ابوالحسن سراجؒ  ِ 4.5 - حضرت ابو علی شفیق بلخیؒ  ِ 4.8 - حضرت شیخ علی بن موفقؒ  ِ 4.16 - حضرت عبداللہ بن صالحؒ  ِ 4.12 - حضرت ذوالنون مصریؒ  ِ 4.17 - حضرت لیث بن سعدؒ  ِ 4.18 - حضرت شیخ مزنیؒ  ِ 4.20 - حضرت جنید بغدادیؒ  ِ 4.21 - حضرت شیخ عثمانؒ  ِ 4.19 - حضرت مالک بن دینارؒ  ِ 4.22 - حضرت شبلیؒ  ِ 4.24 - حاجی سید محمد انورؒ  ِ 4.25 - مولانا محب الدینؒ  ِ 4.26 - شیخ الحدیث مولانا محمد ذکریاؒ  ِ 4٫28 - حضرت علیؓ  ِ 4٫29 - حضرت عائشہؓ  ِ 4.30 - حضرت بلالؓ  ِ 4.31 - حضرت ابراہیم خواصؓ  ِ 4.32 - شیخ ابوالخیر اقطعؒ  ِ 4.34 - شیخ عبدالسلام بن ابی القاسمؒ  ِ 4٫36 - حضرت سفیان ثوریؒ  ِ 4٫37 - شیخ ابو نصر عبدالواحدؒ  ِ 4.38 - حضرت ابو عمران واسطیؒ  ِ 4.39 - حضرت سید احمد رفاعیؒ  ِ 4.40 - حضرت شیخ احمد بن محمد صوفیؒ  ِ 4.41 - حضرت شاہ ولی اللہؒ  ِ 4.42 - حضرت آدم بنوریؒ  ِ 4.44 - حضرت شاہ گل حسن شاہؒ  ِ 4.46 - حضرت خواجہ محمد سعیدؒ  ِ 4.48 - حضرت حاجی امداد اللہ مہاجر مکیؒ  ِ 4.45 - پیر سید جماعت علی شاہؒ  ِ 4.49 - شیخ الحدیث حضرت مولانا سید بدر عالم میرٹھیؒ  ِ 4.50 - حضرت مہر علی شاہؒ  ِ 4.51 - شیخ ابن ثابتؒ  ِ 4٫52 - حضرت مولانا سید حسین احمد مدنیؒ  ِ 44 - مناسکِ حج
سارے دکھاو ↓

براہِ مہربانی اپنی رائے سے مطلع کریں۔

Your Name (required)

Your Email (required)

Subject

Category

Your Message