یہ تحریر العربية (عربی) میں بھی دستیاب ہے۔

عید

کتاب : تجلیات

مصنف : خواجہ شمس الدین عظیمی

مختصر لنک : http://iseek.online/?p=3048

اللہ اکبر اللہ اکبر لا الہ الا اللہ واللہ اکبر اللہ اکبر واللہ الحمد
ہجرت کے بعد جب رسول اللہﷺ مدینہ منورہ تشریف لائے تو اہلِ مدینہ دو مخصوص دن تفریح کیا کرتے تھے۔ رسول اللہﷺ نے دریافت فرمایا ‘‘یہ دو روز کیا ہیں’’
اہلِ مدینہ نے عرض کیا ‘‘یا رسول اللہﷺ ! زمانہ جاہلیت کے وقت ہم ان دنوں میں کھیل کود اور تفریح کرتے تھے’’
آنحضرت ﷺ نے فرمایا ‘‘اے اہلِ یثرب! اللہ تعالیٰ نے تم کو ان دو دنوں کی بجائے ان سے بہت اعلیٰ و ارفع دن عید الفطر اور عید الاضحیٰ کے عطا کئے ہیں’’ ۔ اور فرمایا کہ جب عید کا دن ہوتا ہے تو فرشتے عید گاہ کے راستے میں انتظار کرتے ہیں اور پکارتے ہیں :
اے مسلمانوں کے گروہ! چلو اپنے ربِ کریم کی طرف جو احسان کرتا ہے ، بھلائی کے ساتھ اور اجر فرماتا ہے اور تم کو رات کو عبادت کرنے کا حُکم دیا گیا۔ پس تم نے قیام کیا اورتم کو روزےرکھنے کا فرمان جاری کیا، پس تم نے روزے رکھے اور اپنے ربِّ کریم کی اطاعت کی ۔ اب تم انعام حاصل کرو’’
اور جب نمازی عید کی نماز سے فارغ ہو جاتے ہیں تو ملائکہ اعلان کرتے ہیں :
‘‘آگاہ ہو جاو! بے شک تمہارے رب نے تمہیں اجر عطا فرمایا اور تم آئے اپنے گھر کی طرف کامیاب ہو کر’’
عیدالفطر ایک اعلیٰ و ارفع پروگرام کی کامیابی کی خوشی منانے کا دن ہے۔ ربِ کریم کا کرم ہے کہ اس نے اپنے حبیب پاکﷺ کے صدقے میں ماہِ شوال کی پہلی تاریخ کو دُنیا و آخرت کی لازوال اور بے کراں مسرتوں اور نعمتوں سے ہم کنار فرمایا ۔ جب کہ اسی شوال کے مہینے میں سابقہ امتوں کی نافرمانیوں کی پاداش میں انہیں ہلاک کر دیا گیا تھا۔
حضرت علی کرم اللہ وجہہ سے روایت ہے کہ ماہِ شوال کی پہلی تاریخ بروز شنبہ قومِ نوح غرقاب ہوئی۔ جس دن قومِ لوط پر عذاب آیا اس روز بھی شوال کی پہلی تاریخ تھی۔ فرعون اپنے لشکر سمیت سہ شنبہ کو دریا میں غرق ہوا اور یہ بھی شوال کی پہلی تاریخ تھی۔ قومِ عاد چہار شنبہ کو ہلاک ہوئی۔ اس روز بھی شوال کی پہلی تاریخ تھی۔ قومِ صالح پر پنجشنبہ کو عذاب نازل ہوا اور یہ مہینہ شوال کا تھا۔

عیدالفطر کا دن تھا۔ صبح سویرے تمام مسلمان اپنے مقدس تہوار کی تیاریوں میں مصروف تھے۔ مسرت و شادمانی کی فضا مدینہ پر چھائی ہوئی تھی۔ عید کی نماز کا وقت جیسے جیسے قریب آ رہا تھا ، بوڑھے اور جوان اپنے عمدہ ترین لباس میں ملبوس میں ملبوس عید گاہ کی جانب گامزن تھے۔ بچے اپنے بزرگوں کے نزدیک عید گاہ کے میدان میں کھیل رہے تھے۔ فضا خوشبودار لباس ، معطر رُومالوں اور بچوں کی آوازوں سے رُوح پرور، فرحت انگیز اور دل کش تھی۔ عید کی نماز ختم ہوئی۔ لڑکے اُچھلتے کودتے ، شاداں و فرحان اپنے اپنے گھروں کی جانب واپس ہونے لگےنبی مکرم علیہ الصلوۃ والسلام نے واپسی کا قصد فرمایا تو اچانک آنحضرت ﷺ نے میدان کے ایک گوشے میں تن تنہا، پھٹے پرانے کپڑوں میں ملبوس ایک نحیف و نزار، کمزور و ناتواں لڑکے کو دیکھا جو رو رہا تھا۔ نبی مکرمﷺ فورا اس لڑکے کے قریب پہنچے ۔ شفقت و محبت اور بڑی ملائمیت سے لڑکے کے سر پر ہاتھ رکھا اور فرمایا ‘‘میرے بچے ! تُم کیوں رو رہے ہو’’
لڑکے نے غصے سے آنحضرت ﷺ کا ہاتھ جھٹک دیا اور کہا ‘‘خدا کے واسطے مجھے تنہا چھوڑ دو’’
حضورﷺ نے اس کے بالوں میں شفقت سے اپنی انگلیاں پھیرتے ہوئے فرمایا ‘‘لیکن میرے بچے! مجھے بتاو تو سہی آخرتمہارے ساتھ ہوا کیا ہے؟’’
لڑکے نے اپنے سر کو گھٹنوں میں چھُپا کر سسکیاں لیتے ہوئے کہا ‘‘ پیغمبرِ اسلام کی ایک جنگ میں میرا باپ ہلاک ہو چکا ہے۔ میری ماں نے دوسری شادی کر لی ہے اور اس کے نئے شوہر نے مجھے گھر سے نکال دیا ہے۔ میری جائداد بھی دوسروں نے چھین لی ہے ۔ آج سب لڑکے نئے نئے جوڑے پہن کر خوشی سے ناچ رہے ہیں ، کھیل رہے ہیں اور میرے پاس نہ کھانے کی کوئی چیز ہے اور نہ پہننے کو کوئی کپڑا۔۔ اور نہ پناہ لینے کو کوئی سایہ ۔۔ ’’
لڑکے کی افسوسناک داستان سُن کر حضور ﷺ کی آنکھوں سے آنسو بہنے لگے، مگر آپ نے مسکرا کر فرمایا ‘‘اگر میں تمہارا باپ ہو جاوں اور عائشہ تمہاری ماں اور فاطمہ تمہاری بہن ، تو میرے بچے کیا تم خوش ہو جاو گے؟’’
لڑکے نے فوراََ اثبات میں سر ہلا دیا اور آنحضرت ﷺ اس کو اپنے ساتھ گھر لے گئے۔ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہہ کو آواز دی اور فرمایا ‘‘دیکھو! یہ تمہارا بیٹا ہے’’
اُم المومنین حضرت عائشہ رضی اللہ عنہہ نے اپنے ہاتھوں سے بچے کو نہلایا، نیا کپڑا پہنایا اور کھانا کھلانے کے بعد کہا ‘‘بیٹے ! اب تم باہر جاو، دوسرے بچوں کے ساتھ کھیلو جا کر ۔۔ مگر دیکھو، تھوڑی دیر کے بعد گھر واپس آ جانا’’

یہ مضمون چھپی ہوئی کتاب میں ان صفحات (یا صفحہ) پر ملاحظہ فرمائیں: 217 تا 220

یہ تحریر العربية (عربی) میں بھی دستیاب ہے۔

تجلیات کے مضامین :

ِ 1 - قرآن  ِ 2 - زمین پر اندھیرا  ِ 3 - آسمانوں میں اعلان  ِ 4 - ہماری تصویر  ِ 5 - تسخیرِ کائنات  ِ 6 - دولت کی محبت بت پرستی ہے  ِ 7 - ترقی کا محرم غیر مسلم؟  ِ 8 - کفن دفن  ِ 9 - آگ کا سمندر  ِ 10 - روح کی آنکھیں  ِ 11 - سوکھی ٹہنی  ِ 12 - پرخلوص دل  ِ 13 - تبلیغ  ِ 14 - مشعل راہ  ِ 15 - تخلیقی فارمولے  ِ 16 - توبہ  ِ 17 - بھلائی کا سرچشمہ  ِ 18 - عظیم احسان  ِ 19 - طرزِ فکر  ِ 20 - حج  ِ 21 - شیریں آواز  ِ 22 - دو بیویاں  ِ 23 - صراط مستقیم  ِ 24 - ماں باپ  ِ 25 - محبت  ِ 26 - خود داری  ِ 27 - بیداری  ِ 28 - قطرۂ آب  ِ 29 - خدا کی تعریف  ِ 30 - زندگی کے دو رُخ  ِ 31 - علم و آگہی  ِ 32 - جھاڑو کے تنکے  ِ 33 - رزق  ِ 34 - مُردہ قوم  ِ 35 - پیغمبر کے نقوشِ قدم  ِ 36 - نیکی کیا ہے؟  ِ 37 - ضدی لوگ  ِ 38 - سعید روحیں  ِ 39 - توفیق  ِ 40 - سورج کی روشنی  ِ 41 - رب کی مرضی  ِ 42 - دُنیا اور آخرت  ِ 43 - بیوی کی اہمیت  ِ 44 - خود شناسی  ِ 45 - دماغ میں چُھپا ڈر  ِ 46 - روزہ  ِ 47 - مناظر  ِ 48 - دُعا  ِ 48 - مساجد  ِ 50 - علیم و خبیر اللہ  ِ 51 - مایوسی  ِ 52 - ذخیرہ اندوزی  ِ 53 - بھائی بھائی  ِ 54 - اللہ کی کتاب  ِ 55 - اونگھ  ِ 56 - انسان کے اندر خزانے  ِ 57 - اللہ کی صناعی  ِ 58 - ناشکری  ِ 59 - آئینہ  ِ 60 - مُردہ دلی  ِ 61 - خدا کی راہ  ِ 62 - غرور  ِ 63 - رمضان  ِ 64 - قبرستان  ِ 65 - قرآن اور تسخیری فارمولے  ِ 66 - اچھا دوست  ِ 67 - موت سے نفرت  ِ 68 - خطاکار انسان  ِ 69 - دوزخی لوگوں کی خیرات  ِ 70 - معاشیایات  ِ 71 - آدابِ مجلس  ِ 72 - السلامُ علیکُم  ِ 73 - گانا بجانا  ِ 74 - مخلوق کی خدمت  ِ 75 - نبی مکرم صلی اللہ علیہ وسلم  ِ 76 - صبر و استقامات  ِ 77 - مہمان نوازی  ِ 78 - مسکراہٹ  ِ 79 - بلیک مارکیٹنگ  ِ 80 - دوست  ِ 81 - مذہب اور نئی نسل  ِ 82 - معراج  ِ 83 - انسانی شُماریات  ِ 84 - جائیداد میں لڑکی کا حصہ  ِ 85 - دعوتِ دین  ِ 86 - فرشتے نے پوچھا  ِ 87 - سونے کا پہاڑ  ِ 88 - مچھلی کے پیٹ میں  ِ 89 - بچوں کے نام  ِ 90 - صدقہ و خیرات  ِ 91 - اپنا گھر  ِ 92 - غیب کا شہُود  ِ 93 - حقوق العباد  ِ 94 - فقیر دوست  ِ 95 - بے عمل داعی  ِ 96 - عید  ِ 97 - جذب وشوق  ِ 98 - موت کا خوف  ِ 99 - فرشتوں کی جماعت  ِ 100 - اعتدال  ِ 101 - مشن میں کامیابی
سارے دکھاو ↓

براہِ مہربانی اپنی رائے سے مطلع کریں۔

Your Name (required)

Your Email (required)

Subject

Category

Your Message