عالمِ جُو

کتاب : لوح و قلم

مصنف : حضور قلندر بابا اولیاءؒ

مختصر لنک : http://iseek.online/?p=248

جب اللہ تعالیٰ نے کُن فرمایا تو صفاتِ الٰہیہ کائنات کی شکل وصورت بن گئیں۔ یعنی اللہ تعالیٰ کی صفات کے اَجزاء کثرت کا چہرہ بن گئے۔ یہ چہرہ ان تمام روحوں یا اَجزاء کا مجموعہ ہے جن کو الگ الگ مخلوق کی شکل وصورت حاصل ہوئی۔

  1. تخلیق کی پہلی تعریف یہ ہوئی کہ اَجزاءِ لاتجزأ یعنی روحیں جن کو قرآن میں اَمرِربِّی کہا گیا ہے مَوجودات کی صورت میں نمایاں ہو گئیں۔ اس تعریف کو مدنظر رکھ کر ہم اس ربط کو نہیں بھول سکتے جو خالق اور مخلوق کے درمیان ہے۔ اس ہی ربط کو تصوّف کی زبان میں ‘‘جُو’’ کہا گیا ہے۔
  2. ‘‘جُو’’ کی دوسری تعریف یہ ہے کہ مخلوق ہر قدم پر خالق کے ربط کی محتاج ہے اور خالق کی صفات ہی ہر لمحہ ‘‘جُو’’ کو حیات نو عطا کرتی ہے۔
  3. ‘‘جُو’’ کے تیسرے مرحلے میں ایک ایسا سلسلہ سامنے آتا ہے جس کو ہم پیدائش کا ذریعہ قرار دیتے ہیں۔ تصوّف کی زبان میں اس کا نام رخِ اوّل ہے۔
  4. ‘‘جُو’’ کا چوتھا سلسلہ خود پیدائش کی شکل و صورت کے نام ہے جس کو تصوّف کی زبان میں رُخِ ثانی کہتے ہیں۔ یہ دونوں رُخ ‘‘جُو’’ کے تنوع کا مجموعہ ہیں۔
  5. ‘‘جُو’’ کے پانچویں سلسلہ میں افراد کا ذہن تنظیم کی نوعیت اِختیار کر لیتا ہے یعنی ‘‘جُو’’ کا انفرادی احساس ایک ایک فرد کے احساس کا اِدراک کر لیتا ہے۔

‘‘جُو’’…. نَحْنُ اَقْرَبُ اِلَیْہِ مِنْ حَبلِ الوَرید …. کی شرح ہے۔ کائنات میں جو چیز شعور کو محسوس ہوتی ہے یا نظر آتی ہے یا شعور اس کا اِدراک کرتا ہے اس کا وجود تمثُّلِ اوّل کی شکل میں‘‘جُو’’ کے اندر پایا جاتا ہے۔ کوئی فرد جہاں بھی ہے تمثُّلِ اوّل کا عکس ہے خواہ وہ فرد انسان ہو، جن ہو، فرشتہ ہو، نباتات سے ہو یا جمادات سے یا کسی کرّہ کی حیثیت رکھتا ہو۔
کائنات کا ہر فرد ‘‘جُو’’ کے ذریعے لاشعوری طور پر ایک دوسرے کے ساتھ رُوشناس اور منسلک ہے۔ تصوّف کی زبان میں‘‘جُو’’ کی تفصیلات ‘‘مُغیباتِ اَکوان’’ کہلاتی ہیں۔ اگر کسی فرد کو مغیباتِ اَکوان کا علم حاصل ہے تو وہ ایک ذرّہ کی حرکت کو دوسرے ذرّہ کی حرکت سے مُلحق دیکھ سکتا ہے۔ بالفاظ دیگر‘‘جُو’’ کا شعور رکھنے والا اگر ہزار سال پہلے کے یا ہزار سال بعد کے واقعات کا مشاہدہ کرنا چاہے تو کر سکتا ہے۔

یہ مضمون چھپی ہوئی کتاب میں ان صفحات (یا صفحہ) پر ملاحظہ فرمائیں: 21 تا 22

لوح و قلم کے مضامین :

ِ 0.01 - انتساب  ِ 0.02 - عرضِ احوال  ِ 1 - بسمِ اللہِ الرّحمٰن الرّحیم  ِ 2 - عالمِ رُؤیا سے انسان کا تعلق  ِ 3 - رُؤیا کی صلاحیّتوں کے مَدارِج  ِ 4 - لوحِ اوّل یا لوحِ محفوظ  ِ 5 - لوحِ دوئم  ِ 6 - عالمِ جُو  ِ 7 - کثرت کا اَجمال  ِ 8 - ‘‘جُو’’ کا واسطہ  ِ 9 - احساس کی درجہ بندی  ِ 10 - وَحدتُ الوُجود اور وَحدتُ الشُہود  ِ 11 - روحِ اعظم، روحِ انسانی، روحِ حیوانی اور لطائفِ ستّہ  ِ 12 - اسماءِ الٰہیہ  ِ 13 - اسماءِ الٰہیہ کی تعداد گیارہ ہزار ہے  ِ 14 - خواب اور بیداری  ِ 15 - لوحِ محفوظ اور مراقبہ  ِ 16 - تدلّٰی  ِ 17 - کُن فیَکون  ِ 18 - علمِ لدُنّی  ِ 19 - ہر اسم تین تجلّیوں کا مجموعہ ہے  ِ 20 - اسمِ ذات  ِ 21 - روح کی مرکزیّتیں اور تحریکات  ِ 22 - لطیفۂِ نفسی کی حرکت  ِ 23 - باصرہ اور شُہود نفسی  ِ 24 - عملِ اِسترخاء  ِ 25 - علم ‘‘لا’’ اور علم ‘‘اِلّا’’  ِ 26 - ‘‘لا’’ کا مراقبہ  ِ 27 - قوّتِ اَلقاء  ِ 28 - سالک مجذوب، مجذوب سالک  ِ 29 - نسبت کا بیان  ِ 30 - ٹائم اسپیس کا قانون  ِ 31 - زمانیت اور مکانیت کا راز  ِ 32 - کائنات کی ساخت  ِ 33 - نیابت کیا ہے؟  ِ 34 - لوحِ محفوظ کا قانون  ِ 35 - اَنا یا انسانی ذہن کی ساخت  ِ 36 - علمُ الیقین، عینُ الیقین، حقُ الیقین  ِ 37 - تخلیق کا قانون  ِ 38 - انبیاء کے مقامات  ِ 39 - تخلیق کا فارمولا  ِ 40 - ماضی اور مستقبل  ِ 41 - زمان و مکان کی حقیقت  ِ 42 - اِدراک کیا ہے؟
سارے دکھاو ↓

براہِ مہربانی اپنی رائے سے مطلع کریں۔

Your Name (required)

Your Email (required)

Subject (required)

Category

Your Message (required)