زمین اور آسمان

کتاب : آگہی

مصنف : خواجہ شمس الدۤین عظیمی

مختصر لنک : http://iseek.online/?p=11544

کائنات کا مربوط نظام ہی ہمیں بے عقلی سے عقل کی طرف لے جاتا ہے۔ اس سفر میں اعتدال، توازن اور رہنمائی نہ ہو تو عقل ذہنی عذاب بن جاتی ہے۔

ایسا نظر آ رہا ہے کہ دانشور ایک دن یہ راز معلوم کرنے میں کامیاب ہو جائے گا کہ کائنات کے آغاز سے پہلے کیا تھا؟
دانشور ایک روز اس حقیقت تک پہنچ جائے گا کہ کہکشانی نظام، بے شمار زمینیں اور زمینوں کے اوپر بے شمار نوعیں اور انسانی شماریات سے زیادہ نوعوں کے افراد اور کائنات کے دیگر افراد کی پلاننگ اور ڈیزائننگ کس نے کی ہے۔۔۔یہ اس لئے ہو گا۔۔۔اور یقیناً ہو گا کہ دانشور قرآن کی دعوت کو قبول کر لیں گے۔

زمین اور آسمان کی ماہیت کیا ہے؟۔۔۔

آسمان بغیر ستون کے کیسے قائم ہے؟۔۔۔

زمین کا بچھونا کس طرح بچھا ہوا ہے؟۔۔۔

زمین سخت بھی ہے، زمین نرم بھی ہے، نہ اتنی نرم ہے کہ آدمی اس کے اندر دھنس جائے، نہ اتنی سخت ہے کہ آدمی کا چلنا پھرنا محال اور مشکل ہو جائے۔ زمین کے اندر معدنیات اور نباتات کی تخلیق کس طرح ہو رہی ہے؟۔۔۔یہ مرحلہ بھی تحقیق ہو جائے گا۔ دانشور دیکھتا ہے کہ زمین ایک ہے۔ پانی ایک ہے۔ چاند کی چاندنی بھی ایک ہے لیکن یہی پانی جب زمین کے اندر سے پودوں اور درختوں کی رگوں میں دوڑتا ہے تو کہیں پھول بن جاتا ہے۔ کہیں آم بن جاتا ہے۔ کہیں انار کا روپ دھار لیتا ہے۔ دانشور علت و معلول کی پیچیدہ گتھی سلجھانے کے لئے سوچتا ہے کہ کائنات کے آغاز سے پہلے کیا تھا؟ سائنسدان تحقیق و تلاش میں سرگرداں ہے کہ

۱۔ سیاروں اور ستاروں کی پیدائش۔۔۔

۲۔ ستاروں پر زندگی کے کیمیائی اثرات۔۔۔

۳۔ کرۂ ارضی پر بلکہ بے شمار کرہ ارضی پر زندگی کا ظہور۔۔۔

۴۔ انسانی اور حیوانی تخلیق۔۔۔

۵۔ کہکشانی لہروں کا ایک دوسرے کے ساتھ ملنا اور دور کرنا۔۔۔

۶۔ تابکاری جوہری تقسیم و تحلیل کا جب وہ مطالعہ کرتا ہے تو اس کے اندر یقین کا ایک دروازہ کھلتا ہے اور یقین کے اس دروازے سے گزر کر جب مشاہدات کی دنیائیں اس کے سامنے آتی ہیں تو وہ یہ کہنے پر خود کو مجبور سمجھتا ہے کہ کائنات کے پھیلاؤ کے ساتھ ساتھ انسانی شعور بھی بالغ ہو رہا ہے۔

انشاء اللہ ایک دن یہ ہم آہنگی اسے اپنے اندر مخفی حقیقت سے آشنا کر دے گی۔ دانشور صدیوں کا سفر طے کر کے جس حقیقت تک رسائی حاصل کر رہا ہے، اللہ تعالیٰ کے برگزیدہ بندے اس حقیقت سے متعارف ہوتے ہیں۔

اس لئے متعارف ہیں کہ وہ انبیاء کرام علیہم السلام کی طرز فکر اور ان کے علوم کے حامل ہیں۔ کائنات میں پھیلی ہوئی نشانیوں میں تفکر ان کا شعار ہے۔ تفکر سیدنا حضورﷺ کی سنت ہے۔ قرآن حکیم مختلف حوالوں سے ہمیں کائنات اور اجزائے کائنات میں تفکر کی دعوت دیتا ہے اور اعلان کرتا ہے۔۔۔

’’ہم نے اس کا سمجھنا آسان کر دیا، ہے کوئی سمجھنے والا؟‘‘(سورۃ القمر۔ آیت ۱۷،۲۲،۳۲،۴۰)

حضور قلندر بابا اولیاءؒ کے مشن کے لئے خود کو نثار کرنے والے دوستو!

جس طرح روز ازل میں اللہ تعالیٰ کی آواز سن کر، اللہ تعالیٰ کو دیکھ کر، خالق اور مخلوق کے رشتے سے آشنا ہو کر اللہ تعالیٰ کی ربوبیت کا اقرار کیا تھا۔ خالق کی پکار کا جواب دیا تھا۔ اسی طرح قرآن کی دعوت پر لبیک کہو۔ یقین سے اس بات کا عہد کرو کہ آپ کو اللہ تعالیٰ کی نشانیوں میں تفکر کرنا ہے۔ حضور علیہ الصلوٰۃ السلام اور ان کے جد اعلیٰ حضرت ابراہیم علیہ السلام کی سنت کی پیروی کرنا ہے۔
حضور قلندر بابا اولیاءؒ کی نسبت سے رحمت اللعالمین سیدنا حضورﷺ کا قلبی اور باطنی تعارف حاصل کرنا ہے۔
غم و آلام اور مصیبتوں پریشانیوں کا شکار نوع انسانی کو بے یقینی اور شک اور وسواس کے عمیق گڑھوں سے نکال کر سکون قلب سے، راحت سے، آرام سے، خوشی سے ہمکنار کرنا ہے۔ مجھے خوشی ہے کہ قلندر شعور اکیڈمی نے میرے عظیمی بچوں کے اندر غور و فکر اور تفکر کے پیٹرن کو ابھارنے کے لئے ورکشاپ کا انعقاد کیاہے۔ بلاشبہ قلندر شعور اکیڈمی کی انتظامیہ اس سلسلے میں مبارکباد کی مستحق ہے۔ میں اکیڈمی کی پرنسپل محترمہ زینب اشرفی صاحبہ کو اس بات کی مبارکباد دیتا ہوں کہ انہوں نے اپنی ذمہ داریوں کو بحسن خوبی نبھایا ہے۔

ورکشاپ کے سلسلے میں محترم انعام عظیمی کی محنت اور ایثار سے مجھے خوشی حاصل ہوئی اور میں خوش ہوں کہ انہوں نے اور اکیڈمی کے دیگر اساتذہ کرام جناب نور عالم اور جناب سہیل احمد نے جانفشانی، محنت اور توجہ سے طالب علموں کے اندر علمی ذوق اور شوق پیدا کر دیا ہے۔

آپ سب عظیمی میری روحانی اولاد ہیں۔ تمام طالبات اور طلباء نے اساتذہ کرام نے، اپنے طرز عمل سے مجھے خوشی دی ہے۔ میں دعا گو ہوں کہ آپ سورج بن کر دھوپ کی طرح زمین کو روشن کریں۔ چاند کی چاندنی کی طرح نوع انسانی کو سکون پہنچائیں۔ آسمان پر چمکتے ستارے بن جائیں۔

اللہ تعالیٰ آپ سب کا نگہبان ہو، آپ کے اوپر اللہ تعالیٰ اپنی رحمت کی چادر ڈھانپے رکھے۔ اللہ تعالیٰ آپ سے راضی ہو اور حضور قلندر بابا اولیاءؒ کی نسبت آپ کے اوپر محیط ہو اور رسول اللہﷺ آپ سے راضی ہوں۔ (آمین)

یہ مضمون چھپی ہوئی کتاب میں ان صفحات (یا صفحہ) پر ملاحظہ فرمائیں: 175 تا 178

آگہی کے مضامین :

ِ انتساب  ِ پیش لفظ  ِ 1 - روحانی اسکول میں تربیت  ِ 2 - با اختیار بے اختیار زندگی  ِ 3 - تین سال کا بچہ  ِ 4 - مرید کی تربیت  ِ 5 - دس سال۔۔۔؟  ِ 6 - قادرِ مطلق اللہ تعالیٰ  ِ 7 - موت حفاظت کرتی ہے  ِ 8 - باہر نہیں ہم اندر دیکھتے ہیں  ِ 9 - اطلاع کہاں سے آتی ہے؟  ِ 10 - نیند اور شعور  ِ 11 - قانون  ِ 12 - لازمانیت اور زمانیت  ِ 13 - مثال  ِ 14 - وقت۔۔۔؟  ِ 15 - زمین پر پہلا انسان  ِ 16 - خالق اور مخلوق  ِ 17 - مٹی خلاء ہے۔۔۔  ِ 18 - عورت کے دو رُخ  ِ 19 - قانون  ِ 20 - ہابیل و قابیل  ِ 21 - آگ اور قربانی  ِ 22 - آدم زاد کی پہلی موت  ِ 23 - روشنی اور جسم  ِ 24 - مشاہداتی نظر  ِ 25 - نیند اور بیداری  ِ 26 - جسمِ مثالی  ِ 27 - گیارہ ہزار صلاحیتیں  ِ 28 - خواتین اور فرشتے  ِ 29 - روح کا لباس؟  ِ 30 - ملت حنیف  ِ 31 - بڑی بیگمؓ، چھوٹی بیگمؓ  ِ 32 - زم زم  ِ 33 - خواتین کے فرائض  ِ 34 - تیس سال پہلے  ِ 36 - کہکشانی نظام  ِ 37 - پانچ حواس  ِ 38 - قانون  ِ 39 - قدرِ مشترک  ِ 40 - قانون  ِ 41 - پچاس سال  ِ 42 - زندگی کا فلسفہ  ِ 43 - انسانی مشین  ِ 44 - راضی برضا  ِ 45 - زمانے کو بُرا نہ کہو، زمانہ اللہ تعالیٰ ہے(حدیث)  ِ 46 - مثال  ِ 47 - سائنس اور روحانیت  ِ 48 - مادی دنیا اور ماورائی دنیا  ِ 49 - چاند گاڑی  ِ 50 - تین ارب سال  ِ 51 - کائناتی نظام  ِ 52 - تخلیق کا قانون  ِ 53 - تکوین  ِ 54 - دو علوم۔۔۔  ِ 55 - قانون  ِ 56 - ذات کا عرفان  ِ 57 - روحانی شاگرد  ِ 58 - ذات کی نفی  ِ 59 - پانچ کھرب بائیس کروڑ!  ِ 60 - زندگی کا تجزیہ  ِ 61 - عیدالفطر اور عیدالاضحیٰ  ِ 62 - دین فطرت  ِ 63 - عید  ِ 64 - ملائکہ اعلان کرتے ہیں  ِ 65 - بچے اور رسول اللہﷺ  ِ 66 - افکار کی دنیا  ِ 67 - مثال  ِ 68 - تحقیق و تلاش  ِ 69 - Kirlian Photography  ِ 70 - قرآن علوم کا سرچشمہ ہے  ِ 71 - روشنی سے علاج  ِ 72 - روشنی کا عمل  ِ 73 - چھ نقطے  ِ 74 - قانون  ِ 75 - امراض کا روحانی علاج  ِ 76 - مشق کا طریقہ  ِ 77 - نور کا دریا  ِ 78 - ہر مخلوق عقل مند ہے  ِ 79 - موازنہ  ِ 80 - حضرت جبرائیل ؑ  ِ 81 - ڈائری  ِ 82 - ماں کی محبت  ِ 83 - حضرت بہاؤ الدین ذکریا ملتانیؒ  ِ 84 - اکیڈمی میں ورکشاپ  ِ 85 - زمین اور آسمان  ِ 86 - ورد اور وظائف  ِ 87 - آواز روشنی ہے  ِ 88 - مثال  ِ 89 - نگینوں سے علاج  ِ 90 - تقدیر کیا ہے؟  ِ 91 - مثال  ِ 92 - حضرت علیؓ کا ارشاد  ِ 93 - فرشتے، جنات اور آدم ؑ  ِ 94 - انسان اور موالید ثلاثہ  ِ 95 - سلطان  ِ 96 - مثال  ِ 97 - دو رخ  ِ 98 - سیاہ نقطہ  ِ 99 - قانون  ِ 100 - کوئی معبود نہیں مگر اللہ تعالی۔۔۔  ِ 101 - تین کمزوریاں  ِ 102 - عفو و درگذر  ِ 103 - عام معافی  ِ 104 - توازن  ِ 105 - شکر کیا ہے؟  ِ 106 - قافلہ سالار  ِ 107 - ٹیم ورک  ِ 108 - سلسلہ عظیمیہ کے ارکان کی ذمہ داری  ِ 109 - چھوٹوں کی اصلاح  ِ 110 - ایک نصیحت  ِ 111 - صبحِ بہاراں  ِ 112 - دنیا مسافر خانہ ہے  ِ 113 - روح کیا ہے؟  ِ 114 - سانس کی مشقیں  ِ 115 - من کی دنیا  ِ 116 - بے سکونی کیوں ہے؟  ِ 117 - غور و فکر  ِ 118 - روحانی علوم  ِ 119 - ہمارے بچے  ِ 120 - اللہ تعالیٰ بہت بڑے ہیں  ِ 121 - اللہ ھُو  ِ 122 - اللہ تعالیٰ سے اللہ تعالیٰ کو مانگو  ِ 123 - قربت  ِ 124 - ہر مخلوق باشعور ہے  ِ 125 - کامیاب زندگی  ِ 126 - انا کی لہریں  ِ 127 - صدقۂ جاریہ  ِ 128 - ادراک یا حواس
سارے دکھاو ↓

براہِ مہربانی اپنی رائے سے مطلع کریں۔

Your Name (required)

Your Email (required)

Subject

Category

Your Message