یہ تحریر العربية (عربی) میں بھی دستیاب ہے۔

دوزخی لوگوں کی خیرات

کتاب : تجلیات

مصنف : خواجہ شمس الدین عظیمی

مختصر لنک : http://iseek.online/?p=3021

’’اے رسولﷺ! انسانوں کو حکم دے کہ وہ زمین میں چل پھر کر دیکھیں کہ خدا نے کس طرح آفرینش کی ابتدا کی۔‘‘ (عنکبوت)
’’کیا یہ لوگ آسمان و زمین کی تخلیق پر غور نہیں کرتے؟ معلوم ہوتا ہے کہ ان کی موت قریب آ گئی ہے۔‘‘ (اعراف)
’’غور کرو کہ پہاڑوں میں سفید، سرخ اور سیاہ رنگ پتھروں کی تہیں موجود ہیں نیز انسانوں، چاپایوں اور مویشیوں کے مختلف رنگوں کا مطالعہ کرو اور یاد رکھو اللہ سے اس کے بندوں میں سے صرف عالم ہی ڈرتے ہیں۔‘‘ (فاطر)
ان آیات مبارکہ سے یہ تاثر قائم ہوتا ہے کہ اللہ تعالیٰ، کتاب الٰہی اور کائنات کی تخلیق پر تفکر کر دعوت دیتے ہیں۔ خالق کائنات کی یہ دلی خواہش ہے کہ اس کے بندے تفکر کو اپنا شعار بنا لیں تا کہ یہ حقیقت آشکارا ہو جائے کہ :
’’ہم نے آدم کو علم الاسماء سکھا دیا۔ پھر فرشتوں سے کہا تم بیان کرو اس علم کو اگر تم سچے ہو۔‘‘ (سورۂ بقرہ)
جو قومیں اللہ کی آیات اور مطالعۂ کائنات میں غور و فکر کرتی ہیں، کائناتی حقائق ان کے سامنے آ جاتے ہیں۔ ایسی قومیں جو کائناتی حقیقتوں کو تلاش کر کے اپنا کردار ادا کرتی ہیں معزز اور محترم بنا دی جاتی ہیں۔ اس کے برعکس جو قوم مردہ دل ہو کر اپنی سوچ اور اپنی فہم کا محور ریا کاری کو بنا لیتی ہے اس کے اوپر ذلت اور رسوائی کا عذاب نازل کر دیا جاتا ہے۔ اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے:
’’تمام کائنات اور زمین کے خزانے تمہارے لئے پیدا کئے گئے ہیں۔‘‘ (سورۂ بقرہ)
’’انسان سے آنکھ، کان اور دل کے متعلق باز پرس ہو گی۔‘‘ (بنی اسرائیل)
آج کے ترقی یافتہ دور میں ہم دیکھ رہے ہیں کہ وہی قوم سربلند اور معزز و محترم ہے جو صحیح معنوں میں آنکھ، کان اور دل کا استعمال کر رہی ہے۔ یہ ساری سائنسی ترقیاں اسی لئے وجود میں آتی ہیں کہ ایک قوم کے افراد نے اللہ کی بخشی ہوئی اس نعمت کو عقل و شعور اور تفکر کے ساتھ استعمال کیا ہے۔
’’ہم نے فولاد پیدا کیا جو ایک پر ہیبت اور نہایت مفید دھات ہے۔‘‘ (سورۂ حدید)
سائنس کی کون سی ترقی ہے جس میں کسی نہ کسی طرح دھات کا عمل دخل نہ ہو۔ ہوائی جہاز، پانی کے جہاز، ریل کی پٹری، موٹر کاریں، دیوہیکل مشینیں، چھوٹی بڑی فیکٹریاں، آگ اُگلنے والے اسلحہ جات ، کیا یہ سب ہمارے لئے درس عبرت نہیں ہیں؟ قرآن ہمارا ہے، اللہ ہمارا ہے، آیت ہمارے قرآن کی ہے۔ لیکن چونکہ ہم تفکر سے عاری ہیں اور دوسری قومیں تفکر سے معمور ہیں اس لئے ہم محروم ہیں اور وہ آسودہ ہیں۔ ہم ذلیل و خوار ہیں وہ باعزت ہیں۔ ہم بھکاری ہیں اور وہ ہمیں خیرات دینے والے ہیں۔ کہا جاتا ہے کہ ہم مسلمان جنتی ہیں اور اغیار دوزخی ہیں۔ عقل حیران ہے کہ یہ کیسی منطق ہے! دوزخی لوگوں کی خیرات پر جنتی لوگوں کی گزر بسر ہے، جنتی لوگ دوزخی لوگوں کی اترن پہنتے ہیں۔ جنتی لوگ ہر ہر معاملہ میں دوزخیوں کے دست نگر ہیں۔
کائناتی تفکر نہ ہونے سے ہم ایک ایسی قوم بن گئے ہیں جس کا کوئی مقام زمین پر ہے نہ آسمانوں میں اس کی کوئی شنوائی ہے۔ تفکر اور تدبر کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ قرآن میں وضو، نماز، صوم و زکوٰۃ، حج، طلاق، قرض، آداب معاشرت وغیرہ پر ڈیڑھ سو آیات ہیں اور کائنات پر تفکر کرنے سے متعلق آیات کی تعداد سات سو چھپن ہے۔
’’ارض و سما کی تخلیق اور اختلاف لیل و نہار میں عقل مندوں کے لئے آیات موجود ہیں۔‘‘ (آل عمران)
’’ارض و سما کی تخلیق، اختلاف لہل و نہار، سمندروں میں تیرنے والی مفید کشتیوں اور اس گھٹا میں جو زمین و آسمان کے درمیان خیمہ آرا ہے ارباب عقل و خرد کے لئے نشانیاں موجود ہیں۔‘‘ (بقرہ)

یہ مضمون چھپی ہوئی کتاب میں ان صفحات (یا صفحہ) پر ملاحظہ فرمائیں: 151 تا 153

یہ تحریر العربية (عربی) میں بھی دستیاب ہے۔

تجلیات کے مضامین :

ِ 1 - قرآن  ِ 2 - زمین پر اندھیرا  ِ 3 - آسمانوں میں اعلان  ِ 4 - ہماری تصویر  ِ 5 - تسخیرِ کائنات  ِ 6 - دولت کی محبت بت پرستی ہے  ِ 7 - ترقی کا محرم غیر مسلم؟  ِ 8 - کفن دفن  ِ 9 - آگ کا سمندر  ِ 10 - روح کی آنکھیں  ِ 11 - سوکھی ٹہنی  ِ 12 - پرخلوص دل  ِ 13 - تبلیغ  ِ 14 - مشعل راہ  ِ 15 - تخلیقی فارمولے  ِ 16 - توبہ  ِ 17 - بھلائی کا سرچشمہ  ِ 18 - عظیم احسان  ِ 19 - طرزِ فکر  ِ 20 - حج  ِ 21 - شیریں آواز  ِ 22 - دو بیویاں  ِ 23 - صراط مستقیم  ِ 24 - ماں باپ  ِ 25 - محبت  ِ 26 - خود داری  ِ 27 - بیداری  ِ 28 - قطرۂ آب  ِ 29 - خدا کی تعریف  ِ 30 - زندگی کے دو رُخ  ِ 31 - علم و آگہی  ِ 32 - جھاڑو کے تنکے  ِ 33 - رزق  ِ 34 - مُردہ قوم  ِ 35 - پیغمبر کے نقوشِ قدم  ِ 36 - نیکی کیا ہے؟  ِ 37 - ضدی لوگ  ِ 38 - سعید روحیں  ِ 39 - توفیق  ِ 40 - سورج کی روشنی  ِ 41 - رب کی مرضی  ِ 42 - دُنیا اور آخرت  ِ 43 - بیوی کی اہمیت  ِ 44 - خود شناسی  ِ 45 - دماغ میں چُھپا ڈر  ِ 46 - روزہ  ِ 47 - مناظر  ِ 48 - دُعا  ِ 48 - مساجد  ِ 50 - علیم و خبیر اللہ  ِ 51 - مایوسی  ِ 52 - ذخیرہ اندوزی  ِ 53 - بھائی بھائی  ِ 54 - اللہ کی کتاب  ِ 55 - اونگھ  ِ 56 - انسان کے اندر خزانے  ِ 57 - اللہ کی صناعی  ِ 58 - ناشکری  ِ 59 - آئینہ  ِ 60 - مُردہ دلی  ِ 61 - خدا کی راہ  ِ 62 - غرور  ِ 63 - رمضان  ِ 64 - قبرستان  ِ 65 - قرآن اور تسخیری فارمولے  ِ 66 - اچھا دوست  ِ 67 - موت سے نفرت  ِ 68 - خطاکار انسان  ِ 69 - دوزخی لوگوں کی خیرات  ِ 70 - معاشیایات  ِ 71 - آدابِ مجلس  ِ 72 - السلامُ علیکُم  ِ 73 - گانا بجانا  ِ 74 - مخلوق کی خدمت  ِ 75 - نبی مکرم صلی اللہ علیہ وسلم  ِ 76 - صبر و استقامات  ِ 77 - مہمان نوازی  ِ 78 - مسکراہٹ  ِ 79 - بلیک مارکیٹنگ  ِ 80 - دوست  ِ 81 - مذہب اور نئی نسل  ِ 82 - معراج  ِ 83 - انسانی شُماریات  ِ 84 - جائیداد میں لڑکی کا حصہ  ِ 85 - دعوتِ دین  ِ 86 - فرشتے نے پوچھا  ِ 87 - سونے کا پہاڑ  ِ 88 - مچھلی کے پیٹ میں  ِ 89 - بچوں کے نام  ِ 90 - صدقہ و خیرات  ِ 91 - اپنا گھر  ِ 92 - غیب کا شہُود  ِ 93 - حقوق العباد  ِ 94 - فقیر دوست  ِ 95 - بے عمل داعی  ِ 96 - عید  ِ 97 - جذب وشوق  ِ 98 - موت کا خوف  ِ 99 - فرشتوں کی جماعت  ِ 100 - اعتدال  ِ 101 - مشن میں کامیابی
سارے دکھاو ↓

براہِ مہربانی اپنی رائے سے مطلع کریں۔

Your Name (required)

Your Email (required)

Subject

Category

Your Message