حضرت آدم ؑ کے قصے میں حکمت

کتاب : محمد الرّسول اللہ(صلی اللہ علیہ وسلم) جلد سوئم

مصنف : خواجہ شمس الدّین عظیمی

مختصر لنک : http://iseek.online/?p=13650

حضرت آدم ؑ کے قصے میں بے شمار حکمتیں موجود ہیں جن میں سے چند یہ ہیں:
* حضرت آدم ؑ اور ان کی اولاد کا شرف اس علم اور ان صفات کی بناء پر ہے جو اللہ نے مٹی کے پتلے میں اپنی روح پھونکنے کے بعد اسے عطا کر دی ہیں۔
* انسان اگر اپنی حقیقت (روح) سے واقف ہے اور ان قاعدوں، ضابطوں اور فارمولوں سے واقف ہے جو کائنات کے پس پردہ کام کر رہے ہیں تو وہ مخلوق میں افضل ہے۔ بصورت دیگر اس کی حیثیت مٹی کے پتلے کی ہے جس کے اندر اپنی ذاتی کوئی حرکت نہیں ہے۔
* سہواً غلطی کرنے کے باوجود آدم ؑ نے عاجزی کا مظاہرہ کیا جسے اللہ نے پسند فرمایا اور معاف فرما دیا یعنی اللہ کو آدم کی عجز و انکساری پسند آئی۔ یہ عجز و انکساری کا ہی نتیجہ ہے کہ حضرت آدمؑ کی اولاد میں ایک لاکھ چوبیس ہزار پیغمبر پیدا ہوئے۔
* عجز کے مقابلے میں گستاخی یا بغاوت بڑی سے بڑی نیکی اور بھلائی کو کھا جاتی ہے۔ امر واقعہ یہ ہے کہ کبر و نخوت اور گستاخی نے عزازیل کو راندہ درگاہ کر دیا۔
تکبر عزازیل راخوار کرد
بزندان لعنت گرفتار کرد
* اللہ تعالیٰ قادر مطلق ہے جسے چاہے عزت دے جسے چاہے ذلت دے۔ عزت و شرف اور لعنت و رسوائی اسی کے قبضۂ قدرت میں ہے۔
* آدم کی تخلیق قدرت کا ایک منفرد کرشمہ ہے۔ مٹی کے پتلے کو گوشت پوست کی صورت دے دی۔ مٹی کو گوشت پوست، ہڈی، خون، دل، پھیپھڑے، دماغ میں تبدیل کر دینا اللہ ہی کا کام ہے۔ اگر انسان اپنی مادی تخلیق پر غور کرے تو عقل حیران رہ جاتی ہے کہ یہ سارا جسمانی نظام بغیر کسی مادی کنکشن کے متحرک ہے اور کسی لمحے بھی یہ حرکت ساقط نہیں ہوتی اور اگر کسی وجہ سے اس نظام میں خلل واقع ہو جائے تو جدید ترین آلات کا نظام بھی جسم کے کل پرزوں کو اس طرح متحرک نہیں رکھ سکتا جس طرح قدرت حرکت میں رکھتی ہے۔ مثلاً ہمارے سارے جسم میں خون پہنچانے کے لئے ایک آلہ ہے جو ایک منٹ میں ستر بہتر بار سکڑتا اور پھیلتا ہے اور دل کی یہ خدمت ساری عمر جاری رہتی ہے اور کارکردگی میں اگر فرق آ جائے تو علاج پر لاکھوں روپے خرچ ہو جاتے ہیں۔
گردن سے رانوں کے اوپر تک کا ہمارا جسم ایک صندوق کی طرح ہے۔ اس صندوق کی دیواروں کے درمیان(پسلیوں کے نیچے) پھیپھڑے ہیں۔ سانس کے اندر جانے اور باہر نکلنے کا دارومدار پھیپھڑوں کے سکڑنے اور پھیلنے پر ہے۔ آدمی ایک منٹ میں سولہ(۱۶) یا سترہ(۱۷) بار سانس لیتا ہے اور نکالتا ہے۔ انسان سانس اسی وقت لے سکتا ہے جب خلاء میں ہوا اور آکسیجن موجود ہو۔
* انسان کی بنیادی ضرورت میں پانی کو بڑا دخل ہے پانی نہ ہو تو ساری زمین بنجر ہو جائے گی۔ اللہ نے انسان کو اپنی طرف سے ہر چیز مفت عطا کی ہے، نہ کوئی فیس اور نہ کوئی بل آتا ہے۔
جن اسماء الٰہی کا علم آدم ؑ کو دیا گیا تھا۔ ان ہی اسماء کا علم، نیابت کی ودیعت ہے۔ ان ہی اسماء کے علم کو روحانیت کی زبان میں ’’علم لدنی‘‘ کہتے ہیں۔
وعلم آدم الاسماء کلھا
جب اللہ تعالیٰ نے علم کی تقسیم کی تو سب سے پہلے اپنی صفات کے ناموں کا تعارف کرایا۔ ان ہی ناموں کو اسمائے صفاتی کہا جاتا ہے۔
یہی نام وہ علم ہیں جو اللہ تعالیٰ کے علم کا عکس ہیں۔ صفت کی تعریف کے بارے میں یہ جاننا ضروری ہے کہ اللہ تعالیٰ کی ہر صفت کے ساتھ قدرت اور رحمت کی صفات بھی جمع ہیں۔
مثلاً ربانیت کی صفت کے ساتھ قدرت اور رحمت بھی شریک ہیں۔ یا صمدیت کی صفت کے ساتھ قدرت اور رحمت شامل ہیں۔ اسی طرح احدیت کی صفت کے ساتھ قدرت اور رحمت کی صفت کا ہونا ضروری ہے یعنی اللہ تعالیٰ کی کوئی صفت قدرت اور رحمت کے بغیر نہیں ہے۔ جب ہم اللہ تعالیٰ کو بصیر کہتے ہیں تو اس کا منشاء یہ ہوتا ہے کہ اللہ تعالیٰ بصیر ہونے کی صفت میں قادر اور رحیم بھی ہے یعنی اسے بصیر ہونے میں کامل قدرت اور کامل خالقیت کی استطاعت حاصل ہے۔
اللہ تعالیٰ کا کوئی اسم دراصل ایک تجلی ہے۔ یہ تجلی اللہ تعالیٰ کی ایک خاص صفت کی حامل ہے۔ اور اس تجلی کے ساتھ صفت قدرت کی تجلی اور صفت رحمت کی تجلی بھی شامل ہے۔ اس طرح ہر صفت کی تجلی کے ساتھ دو تجلیاں اور ہیں۔ گویا ہر اسم تین تجلیوں کا مجموعہ ہے۔
۱۔ ایک تجلی صفت اسم کی۔
۲۔ دوسری تجلی صفت قدرت کی۔
۳۔ تیسری تجلی صفت رحمت کی۔
چنانچہ کسی تجلی کے نام کو اسم کہتے ہیں۔ یہاں یہ سمجھنا ضروری ہے کہ ہر اسم مجموعی حیثیت میں دو صفات پر مشتمل ہے۔ ایک خود تجلی اور ایک تجلی کی صفت۔ جب ہم اللہ تعالیٰ کا کوئی اسم ذہن میں پڑھتے ہیں یا زبان سے ادا کرتے ہیں تو ایک تجلی اپنی صفت کے ساتھ حرکت میں آ جاتی ہے۔ اس حرکت کو ہم علم کہتے ہیں۔ جو فی الحقیقت اللہ تعالیٰ کے علم کا عکس ہے۔
عام حالات میں ہماری نظر اس طرف کبھی نہیں جاتی کہ موجودات کے تمام اجسام اور افراد میں ایک مخفی رشتہ ہے۔ اس رشتہ کی تلاش سوائے اہل روحانیت کے اور کسی قسم کے اہل علم اور اہل فن نہیں کر سکتے۔ حالانکہ اسی رشتے پر کائنات کی زندگی کا انحصار ہے۔ یہی رشتہ تمام آسمانی اجرام اور اجرام کے بسنے والے ذی روح اور غیر ذی روح افراد میں ایک دوسرے کے تعارف کا باعث ہے۔
ہماری نگاہ جب کسی ستارے پر پڑتی ہے تو ہم اپنی نگاہ کے ذریعے ستارے کے بشریٰ کو محسوس کرتے ہیں۔ ستارے کا بشریٰ کبھی ہماری نگاہ کو اپنے نظارے سے نہیں روکتا۔ وہ کبھی نہیں کہتا کہ مجھے نہ دیکھو۔ اگر کوئی مخفی رشتہ موجود نہ ہوتا تو ہر ستارہ اور ہر آسمانی نظارہ ہماری زندگی کو قبول کرنے میں کوئی نہ کوئی رکاوٹ ضرور پیدا کرتا۔ یہی مخفی رشتہ کائنات کے پورے افراد کو ایک دوسرے کے ساتھ منسلک کئے ہوئے ہے۔
یہاں اس حقیقت کا انکشاف ہوتا ہے کہ تمام کائنات ایک ہی ہستی کی ملکیت ہے۔ اگر کائنات کے مختلف اجسام، مختلف ہستیوں کی ملکیت ہوتے تو یقیناً ایک دوسرے کی روشناسی میں تصادم پیدا ہو جاتا۔ ایک ہستی کی ملکیت دوسری ہستی کی ملکیت سے متعارف ہونا ہرگز پسند نہ کرتی۔ قرآن پاک نے اسی مالک ہستی کا تعارف لفظ ’’اللہ‘‘ سے کرایا ہے۔ اسمائے مقدسہ میں یہی لفظ ’’اللہ‘‘ اسم ذات ہے۔
اسم ذات مالکانہ حقوق رکھنے والی ہستی کا نام ہے اور اسم صفات قادرانہ صفت رکھتا ہے۔ اسم ذات مالکانہ یعنی خالقیت کے حقوق کا حامل ہے۔ اس کو تصوف کی زبان میں ’’رحمت‘‘ کہتے ہیں۔ چنانچہ ہر صفت کے ساتھ اللہ کا قادرانہ اور رحیمانہ وصف لازم آتا ہے۔ یہی دو اوصاف ہیں جو موجودات کے تمام افراد کے درمیان مخفی رشتے کی حیثیت رکھتے ہیں۔ اسمائے الٰہیہ کا یہ ہی وہ علم ہے جو اللہ تعالیٰ نے آدم ؑ کو سکھایا ہے۔
(لوح و قلم)
اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے! ’’میں تخلیق کرنے والوں میں بہترین خالق ہوں۔‘‘
اللہ تعالیٰ بحیثیت خالق کے ایسے خالق ہیں جن کی تخلیق میں وسائل کی پابندی زیر بحث نہیں آتی۔ اللہ تعالیٰ کے ارادے میں جو چیز جس طرح اور جن خدوخال میں موجود ہے جب وہ اس چیز کو وجود بخشنے کا ارادہ کرتے ہیں تو حکم دیتے ہیں اور اس حکم کی تعمیل کے لئے تخلیق کے لئے جتنے وسائل ضروری ہیں وہ سب وجود میں آ کر اس تخلیق کو عمل میں لے آتے ہیں۔

یہ مضمون چھپی ہوئی کتاب میں ان صفحات (یا صفحہ) پر ملاحظہ فرمائیں: 45 تا 49

محمد الرّسول اللہ(صلی اللہ علیہ وسلم) جلد سوئم کے مضامین :

ِ پیش لفظ  ِ اظہار تشکّر  ِ 1 - حضرت آدم علیہ السّلام  ِ 1.1 - قرآن كريم ميں حضرت آدمؑ کا نام  ِ 1.2 - آدم و حوا جنت میں  ِ 1.3 - حضرت آدم ؑ کے قصے میں حکمت  ِ 1.4 - ذیلی تخلیقات  ِ 1.5 - مابعد النفسیات  ِ 1.6 - مذاہب عالم  ِ 1.7 - قانون  ِ 1.8 - حضرت حواؑ کی تخلیق  ِ 1.9 - مونث، مذکر کا تخلیقی راز  ِ 1.10 - ہابیل و قابیل  ِ 2 - حضرت ادریس علیہ السلام  ِ 2.1 - ٹاؤن پلاننگ  ِ 2.2 - ناپ تول کا نظام  ِ 2.3 - انبیاء کی خصوصیات  ِ 2.4 - تین طبقات  ِ 2.5 - حنوک کی انگوٹھی  ِ 2.6 - حکمت  ِ 2.7 - زمین ہماری ماں ہے  ِ 2.8 - تسخیر کائنات  ِ 3 - حضرت نوح علیہ السلام  ِ 3.1 - پانچ بت  ِ 3.2 - نادار کمزور لوگ  ِ 3.3 - بے وفا بیوی  ِ 3.4 - ساڑھے نو سو سال  ِ 3.5 - نوح کی کشتی  ِ 3.6 - نوحؑ کا بیٹا  ِ 3.7 - چالیس دن بارش برستی رہی  ِ 3.8 - ابو البشر ثانی  ِ 3.9 - عظیم طوفان  ِ 3.10 - صائبین  ِ 3.11 - صحیفۂ وید  ِ 3.12 - زمین کے طبقات  ِ 3.13 - زرپرستی کا جال  ِ 3.14 - حکمت  ِ 3.15 - برف پگھل رہی ہے  ِ 3.16 - بلیک ہول  ِ 3.17 - زمین کی فریاد  ِ 3.18 - نصیحت  ِ 4 - حضرت ہود علیہ السلام  ِ 4.1 - قوم عاد  ِ 4.2 - مغرور اور سرکش  ِ 4.3 - اللہ کی پکڑ  ِ 4.4 - اولاد، باغ اور چشمے  ِ 4.5 - سخت سرزنش  ِ 4.6 - دلیل  ِ 4.7 - حیات و ممات پر کس طرح یقین کریں؟  ِ 4.8 - ظلم کا پنجہ  ِ 4.9 - شداد کی جنت  ِ 4.10 - شداد کی دعا  ِ 4.11 - حکمت  ِ 4.12 - گرد باد (Twister Tornado)  ِ 4.13 - شہاب ثاقب  ِ 5 - حضرت صالح علیہ السلام  ِ 5.1 - شاہی محل  ِ 5.2 - سرداران قوم  ِ 5.3 - اللہ کی نشانی  ِ 5.4 - خوشحال طبقہ  ِ 5.5 - وعدہ خلاف قوم  ِ 5.6 - قتل کا منصوبہ  ِ 5.7 - بجلی کا عذاب  ِ 5.8 - العلاء اور الحجر  ِ 5.9 - آواز تخلیق کی ابتدا ہے  ِ 5.10 - الٹرا سانک آوازیں  ِ 5.11 - آتش فشانی زلزلے  ِ 5.12 - حکمت  ِ 5.13 - روحانی انسان  ِ 5.14 - ماورائی ذہن  ِ 5.15 - رحم میں بچہ  ِ 5.16 - حادثے کیوں پیش آتے ہیں؟  ِ 6 - حضرت ابراہیم علیہ ا؛لسلام  ِ 6.1 - رات کی تاریکی  ِ 6.2 - باپ بیٹے میں سوال و جواب  ِ 6.3 - ہیکل میں بڑا بٹ  ِ 6.4 - حضرت ہاجرہ ؒ  ِ 6.5 - حضرت لوطؑ  ِ 6.6 - اشموئیل  ِ 6.7 - وادی ام القریٰ  ِ 6.8 - زم زم  ِ 6.9 - امت مسلمہ کے لئے یادگار عمل  ِ 6.10 - بیت اللہ کی تعمیر کا حکم  ِ 6.11 - حضرت اسحٰق کی پیدائش  ِ 6.12 - مکفیلہ  ِ 6.13 - حکمت  ِ 6.14 - انسان کے اندر انسان  ِ 6.15 - کیفیات کا ریکارڈ  ِ 6.16 - تجدید زندگی  ِ 6.17 - نیند آدھی زندگی ہے  ِ 6.18 - علم الیقین، عین الیقین، حق الیقین  ِ 6.19 - آئینہ کی مثال  ِ 6.20 - چار پرندے  ِ 6.21 - قلب کی نگاہ  ِ 6.22 - اعلیٰ اور اسفل حواس  ِ 7 - حضرت اسمٰعیل علیہ السلام  ِ 7.1 - صفاء مروہ  ِ 7.2 - حضرت ابراہیمؑ کا خواب  ِ 7.3 - خانہ کعبہ کی تعمیر  ِ 7.4 - حضرت اسمٰعیلؑ کی شادیاں  ِ 7.5 - حکمت  ِ 7.6 - خواب کی حقیقت  ِ 7.7 - خواب اور بیداری کے حواس  ِ 8 - حضرت لوط علیہ السلام  ِ 8.1 - وہ عذاب کہاں ہے  ِ 8.2 - آگ کی بارش  ِ 8.3 - ایڈز  ِ 8.4 - حکمت  ِ 8.5 - طرز فکر  ِ 8.6 - ملک الموت سے دوستی  ِ 9 - حضرت اسحٰق علیہ السلام  ِ 9.1 - حکمت  ِ 10 - حضرت یعقوب علیہ السلام  ِ 10.1 - حضرت یعقوبؑ کے بارہ بیٹے  ِ 10.2 - حکمت  ِ 10.3 - استغنا کی تعریف  ِ 11 - حضرت یوسف علیہ السلام  ِ 11.1 - گیارہ ستارے، سورج اور چاند  ِ 11.2 - مصری تہذیب  ِ 11.3 - حواس باختگی  ِ 11.4 - دو قیدیوں کے خواب  ِ 11.5 - بادشاہ کا خواب  ِ 11.6 - قحط سالی سے بچنے کی منصوبہ بندی  ِ 11.7 - تقسیم اجناس  ِ 11.8 - شاہی پیالے کی تلاش  ِ 11.9 - راز کھل گیا  ِ 11.10 - یوسفؑ کا پیراہن  ِ 11.11 - حکمت  ِ 11.12 - زماں و مکاں کی نفی  ِ 11.13 - خواب کی تعبیر کا علم  ِ 11.14 - اہرام  ِ 11.15 - تحقیقاتی ٹیم  ِ 11.16 - مخصوص بناوٹ و زاویہ  ِ 11.17 - نفسیاتی اور روحانی تجربات  ِ 11.18 - خلا لہروں کا مجموعہ ہے  ِ 11.19 - طولانی اور محوری گردش  ِ 11.20 - سابقہ دور میں سائنس زیادہ ترقی یافتہ تھی  ِ 11.21 - علم سیارگان  ِ 12 - اصحاب کہف  ِ 12.1 - تین سوال  ِ 12.2 - مسیحی روایات کا خلاصہ  ِ 12.3 - دقیانوس  ِ 12.4 - کوتوال شہر  ِ 12.5 - اصحاب کہف کے نام  ِ 12.6 - حکمت  ِ 13 - حضرت شعیب علیہ السلام  ِ 13.1 - محدود حواس کا قانون  ِ 13.2 - توحیدی مشن  ِ 13.3 - حکمت  ِ 13.4 - دولت کے پجاری  ِ 13.5 - مفلس کی خصوصیات  ِ 13.6 - ناپ تول میں کمی  ِ 14 - حضرت یونس علیہ السلام  ِ 14.1 - یوناہ  ِ 14.2 - قیدی اسرائیل  ِ 14.3 - ٹاٹ کا لباس  ِ 14.4 - مچھلی کا پیٹ  ِ 14.5 - سایہ دار درخت  ِ 14.6 - دیمک  ِ 14.7 - استغفار  ِ 14.8 - حکمت  ِ 14.9 - بھاگے ہوئے غلام  ِ 15 - حضرت ایوب علیہ السلام  ِ 15.1 - شیطان کا حیلہ  ِ 15.2 - صبر و شکر  ِ 15.3 - زوجہ محترمہ پر اللہ کا انعام  ِ 15.4 - معجزہ  ِ 15.5 - پانی میں جوانی  ِ 15.6 - صبر اللہ کا نور ہے  ِ 15.7 - حکمت  ِ 15.۸ - صبر کے معنی  ِ 15.۹ - اللہ صاحب اقتدار ہے  ِ 16 - حضرت موسیٰ علیہ السلام  ِ 16.1 - آیا کا انتظام  ِ 16.2 - بیگار  ِ 16.3 - بہادری اور شرافت  ِ 16.4 - لاٹھی  ِ 16.5 - مغرور فرعون  ِ 16.6 - جادوگر  ِ 16.7 - ہجرت  ِ 16.8 - بارہ چشمے  ِ 16.9 - سامری  ِ 16.10 - باپ، بیٹے اور بھائی کا قتل  ِ 16.11 - پست حوصلے  ِ 16.12 - گائے کی حرمت  ِ 16.13 - مجمع البحرین  ِ 16.14 - سوال نہ کیا جائے  ِ 16.15 - ملک الموت  ِ 16.16 - حکمت  ِ 16.17 - لہروں کا تانا بانا  ِ 16.18 - رحمانی طرز فکر، شیطانی طرز فکر  ِ 16.19 - حرص و لالچ  ِ 16.20 - قانون  ِ 16.21 - مادہ روشنی ہے  ِ 16.22 - ارتقاء  ِ 16.23 - ایجادات کا ذہن  ِ 16.24 - انرجی کا بہاؤ  ِ 17 - حضرت سموئیل علیہ السلام  ِ 17.1 - اشدود قوم  ِ 17.2 - سموئیلؑ کا قوم سے خطاب  ِ 17.3 - حکمت  ِ 18 - حضرت ہارون علیہ السلام  ِ 18.1 - سرکشی اور عذاب  ِ 18.2 - سامری کی فتنہ انگیزی  ِ 18.3 - حکمت  ِ 19 - حضرت الیاس علیہ السلام  ِ 19.1 - اندوہناک صورتحال  ِ 19.2 - جان کی دشمن ملکہ
سارے دکھاو ↓

براہِ مہربانی اپنی رائے سے مطلع کریں۔

Your Name (required)

Your Email (required)

Subject (required)

Category

Your Message (required)