اُمّ الابرارؒ (صادقہ)

کتاب : ایک سو ایک اولیاء اللہ خواتین

مصنف : خواجہ شمس الدین عظیمی

مختصر لنک : http://iseek.online/?p=2735

صادقہؒ کا تعلق فرانس سے تھا۔ نام فلورا تھا اور مذہب عیسائی تھا۔ نوجوانی میں انہوں نے نن بننے کا فیصلہ کیا۔ جب کلیسا کے آرچ بشپ جیکب سے اجازت چاہی تو انہوں نے منع کر دیا اور بتایا کہ وہ چار سال پہلے مسلمان ہو چکے ہیں۔ فلورا نے یہ راز اپنے باپ کو بتا دیا۔ پورے شہر میں خبر جنگل کی آگ کی طرح پھیل گئی اور کھلی عدالت میں مذہب سے منحرف ہونے پر مقدمہ چلا۔ آرچ بشپ کو پھانسی دیدی گئی۔

اس واقعہ کے بعد فلورا کا دل ہر چیز سے اچاٹ ہو گیا۔ بالآخر ایک دل آرچ بشپ نے خواب میں آ کر ان کی رہنمائی کی۔ ان کی لکھی ہوئی ڈائری پڑھ کر وہ خاموشی سے مسلمان ہو گئیں۔ بعد میں اپنے مسلمان ملازم سے عربی سیکھی۔ ایک دفعہ ان کے باپ نے انہیں نماز ادا کرتے ہوئے دیکھ لیا۔ بہت مارا پیٹا، یہ لہولہان ہو گئیں۔ فلورا کے بھائی اور ماں نے تفصیلات پوچھیں۔ فلورا نے نہایت اچھے طریقے سے اسلام کی حقانیت کے بارے میں بتایا۔ بعد میں بھائی اور ماں نے بھی اسلام قبول کر لیا۔

باپ نے تینوں کو قید کر دیا۔ بھوکا پیاسا رکھا۔ قید خانے میں حضرت خضرؑ فلورا کے پاس آئے اور کہا:

“تمہارا نام صادقہ ہے۔ تمہارا اخلاص بارگاہ رب العزت میں قبول کر لیا گیا ہے۔ اللہ تعالیٰ اپنے مخلص بندوں کو باطل کے رحم و کرم پر نہیں چھوڑتا۔ تمہیں آج سے تمام روحانی قوتیں حاصل رہیں گی۔ تم اپنی اطاعت گزاری میں ثابت قدم رہنا۔ اللہ تعالیٰ کی رحمت سے تمہاری ہر خواہش پوری ہو گی۔”

اس کے بعد قید خانے میں کھانا پانی غیب سے آتا رہا۔ایک دفعہ باپ نے زہر ملا حلوہ دیا۔ آپ کو علم سے پتہ چل گیا۔ دل میں دعا کی کہ اے صاحب قدرت! اس حلوے کو زہر سے پاک کر دے۔ ایسا ہی ہوا۔ بہن، بھائی اور ماں تینوں نے خوب حلوہ کھایا لیکن زہر کا کوئی اثر نہ ہوا۔ اپنے باپ سے صادقہ نے کہا:

“آپ خود کو عیسائی کہتے ہیں۔ کیا حضرت عیسیٰ ؑ کی یہی تعلیمات تھیں کہ نظریاتی اختلاف رکھنے والوں کو زہر دیا جائے۔ وہ مذہب جس سے آپ کا دور کا بھی واسطہ نہیں ہے اس کے لئے آپ اتنے جذباتی ہو گئے کہ اولاد کو بھی ہلاک کرنے پر آمادہ ہو گئے۔ میرے خیال میں آپ خود کو سچا عیسائی کہہ کر خود کو فریب دے رہے ہیں۔”

صادقہ کے ان الفاظ نے باپ کے دل پر گہرا اثر کیا۔ ندامت کے مارے وہ بلک بلک کر رونے لگا اور اسی وقت مسلمان ہو گیا۔ اس کے بعد صادقہ نے اپنی فیملی کے ساتھ شہر چھوڑ دیا اور دوسرے شہر میں منتقل ہو گئیں۔ پادریوں نے آپ کے خلاف نفرت کی آگ بھڑکا دی اور لوگوں کو یہ باور کرایا کہ صادقہ جادوگرنی ہیں۔ ان پادریوں میں رابرٹ نامی پادری سب سے آگے آگے تھا۔

صادقہ نے ایک دفعہ اس کے کہنے پر اس کے لئے دعا کی تو اس کا مفلوج ہاتھ ٹھیک ہو گیا تھا۔ اب اسی پادری نے ایک بڑے مجمعے کے ساتھ صادقہ کے گھر پر حملہ کرنا چاہا۔ صادقہ نے رابرٹ کو مخاطب کر کے کہا:

“رابرٹ! تم نے یہ کیا ہنگامہ کھڑا کر دیا ہے۔ اگر تم اپنی خیریت چاہتے ہو تو اس مشتعل ہجوم کو واپس لے جاؤ اور کلیسائی عدالت سے رجوع کرو تا کہ مجھ پر اور میرے ساتھیوں پر کھلے عام مقدمہ چلے۔”

کھلی عدالت میں مقدمہ چلا۔ صادقہ اور ان کے ساتھیوں کو سزائے موت سنا دی گئی اور ان لوگوں کو قید خانے میں قید کر دیا گیا۔ قید خانے میں صادقہ نے اندلس کے اسلامی لشکر کے امیر کو کواب میں حکم دیا کہ ہمیں آزاد کراؤ۔ آزاد ہونے کے بعد صادقہ امیر ابن زبان کے ساتھ قرطبہ گئیں جہاں سے حج بیت اللہ کے لئے مکہ مکرمہ پہنچیں۔ ارکان حج ادا کرنے کے بعد آپ مدینہ منورہ حضورﷺ کے آستانہ اقدس پر حاضر ہوئیں اور اس قدر روئیں کہ بے ہوش ہو گئیں۔ ہوش آنے کے بعد کہا:

“کاش میں کبھی ہوش میں نہ آتی۔”

اس کے بعد بغداد ہوتی ہوئیں مراکش پہنچیں۔ جب یہ بغداد سے گزریں تو وہاں قیام کے دوران ان کے ملازم عبدالرحمٰن کی معرفت ایک ولی صفت نوجوان نے انہیں نکاح کا پیغام بھیجا۔ اس وقت صادقہ نے کوئی واضح جواب نہیں دیا لیکن مراکش میں سات سال تک خدمت خلق اور تبلیغ کرنے کے بعد ایک دن ملازم سے کہا:

“بابا جاؤ شہر پناہ کے دروازے پر جا کر ایک مہمان کا استقبال کرو۔”

ملازم نے اس نوجوان کو خوش آمدید کہا۔

صادقہ نے نوجوان سے کہا:

“شادی کا وقت آ پہنچا ہے۔ میں چار دن بعد عصر کی نماز کے بعد آپ سے شادی کروں گی۔”

جمعہ کے دن ایک عالم نے نکاح پڑھایا۔ ایجاب و قبول کے بعد آپ نے وضو کیا اور سنت نبویﷺ کو ادا کرنے کی خوشی میں نفل شکر کی نیت باندھی۔ آخری سجدے میں واصل بحق ہو گئیں۔

ان کا مزار مراکش کے ایک نخلستان میں آج بھی مرجع خلائق ہے۔ جہاں لوگ صادقہ کو “ام الابرار” کے نام سے پکارتے ہیں۔ قرآن پڑھتے ہیں اور ذکر اذکار میں مشغول رہتے ہیں۔

حکمت و دانائی

* اللہ تعالیٰ اپنے مخلص بندوں کو باطل کے رحم و کرم پر نہیں چھوڑتا۔

* تم اپنی اطاعت گزاری میں ثابت قدم رہو۔ اللہ تعالیٰ اپنی رحمت کاملہ سے تمہاری ہر خواہش پوری فرمائے گا۔

* رسول اللہﷺ کے روضۂ مبارک پر تشریف لے گئیں، اتنا روئیں کہ بے ہو ش ہو گئیں۔ ہوش میں آنے کے بعد فرمایا:”کاش میں ہوش میں نہ آتی اور حضورﷺ کے دیدار سے آسودہ ہوتی رہتی۔”

یہ مضمون چھپی ہوئی کتاب میں ان صفحات (یا صفحہ) پر ملاحظہ فرمائیں: 166 تا 169

ایک سو ایک اولیاء اللہ خواتین کے مضامین :

ِ انتساب  ِ 1 - مرد اور عورت  ِ 2 - عورت اور نبوت  ِ 3 - نبی کی تعریف اور وحی  ِ 4 - وحی میں پیغام کے ذرائع  ِ 5 - گفتگو کے طریقے  ِ 6 - وحی کی قسمیں  ِ 7 - وحی کی ابتداء  ِ 8 - سچے خواب  ِ 10 - حضرت محمد رسول اللہﷺ  ِ 10 - زمین پر پہلا قتل  ِ 11 - آدم و حوا جنت میں  ِ 12 - ماں اور اولاد  ِ 13 - حضرت بی بی ہاجرہؑ  ِ 14 - حضرت عیسیٰ علیہ السلام  ِ 15 - نبی عورتیں  ِ 16 - روحانی عورت  ِ 17 - عورت اور مرد کے یکساں حقوق  ِ 18 - عارفہ خاتون ‘‘عرافہ’’  ِ 19 - تاریخی حقائق  ِ 20 - زندہ درگور  ِ 21 - ہمارے دانشور  ِ 22 - قلندر عورت  ِ 23 - عورت اور ولایت  ِ 24 - پردہ اور حکمرانی  ِ 25 - فرات سے عرفات تک  ِ 26 - ناقص العقل  ِ 27 - انگریزی زبان  ِ 29 - عورت کو بھینٹ چڑھانا  ِ 29 - بیوہ عورت  ِ 30 - شوہر کی چتا  ِ 31 - تین کروڑ پچاس لاکھ سال  ِ 32 - فریب کا مجسمہ  ِ 33 - لوہے کے جوتے  ِ 34 - چین کی عورت  ِ 35 - سقراط  ِ 36 - مکاری اور عیاری  ِ 37 - ہزار برس  ِ 38 - عرب عورتیں  ِ 39 - دختر کشی  ِ 40 - اسلام اور عورت  ِ 41 - چار نکاح  ِ 42 - تاریک ظلمتیں  ِ 43 - نسوانی حقوق  ِ 44 - ایک سے زیادہ شادی  ِ 45 - حق مہر  ِ 46 - مہر کی رقم کتنی ہونی چاہئے  ِ 47 - عورت کو زد و کوب کرنا  ِ 48 - بچوں کے حقوق  ِ 49 - ماں کے قدموں میں جنت  ِ 50 - ذہین خواتین  ِ 51 - علامہ خواتین  ِ 52 - بے خوف خواتین  ِ 53 - تعلیم نسواں  ِ 54 - امام عورت  ِ 55 - U.N.O  ِ 56 - توازن  ِ 57 - مادری نظام  ِ 58 - اسلام سے پہلے عورت کی حیثیت  ِ 59 - آٹھ لڑکیاں  ِ 60 - انسانی حقوق  ِ 61 - عورت کا کردار  ِ 62 - دو بیویوں کا شوہر  ِ 63 - بہترین امت  ِ 64 - بیوی کے حقوق  ِ 65 - بے سہارا خواتین  ِ 66 - عورت اور سائنسی دور  ِ 67 - بے روح معاشرہ  ِ 68 - احسنِ تقویم  ِ 69 - ایک سو ایک اولیاء اللہ خواتین  ِ 70 - ایک دوسرے کا لباس  ِ 71 - 2006ء کے بعد  ِ 72 - پیشین گوئی  ِ 73 - روح کا روپ  ِ 74 - حضرت رابعہ بصریؒ  ِ 75 - حضرت بی بی تحفہؒ  ِ 76 - ہمشیرہ حضرت حسین بن منصورؒ  ِ 77 - بی بی فاطمہ نیشاپوریؒ  ِ 78 - بی بی حکیمہؒ  ِ 79 - بی بی جوہربراثیہؒ  ِ 80 - حضرت اُم ابو سفیان ثوریؒ  ِ 81 - بی بی رابعہ عدویہؒ  ِ 82 - حضرت اُمّ ربیعۃ الرائےؒ  ِ 83 - حضرت عفیرہ العابدؒ  ِ 84 - حضرت عبقرہ عابدہؒ  ِ 85 - بی بی فضہؒ  ِ 86 - اُمّ زینب فاطمہ بنتِ عباسؒ  ِ 87 - بی بی کردیہؒ  ِ 88 - بی بی اُم طلقؒ  ِ 89 - حضرت نفیسہ بنتِ حسنؒ  ِ 90 - بی بی مریم بصریہؒ  ِ 91 - حضرت ام امام بخاریؒ  ِ 92 - بی بی اُم احسانؒ  ِ 93 - بی بی فاطمہ بنتِ المثنیٰ ؒ  ِ 94 - بی بی ست الملوکؒ  ِ 95 - حضرت فاطمہ خضرویہؒ  ِ 96 - جاریہ مجہولہؒ  ِ 97 - حبیبہ مصریہؒ  ِ 98 - جاریہ سوداؒ  ِ 99 - حضرت لبابہ متعبدہؒ  ِ 100 - حضرت ریحانہ والیہؒ  ِ 101 - بی بی امتہ الجیلؒ  ِ 102 - بی بی میمونہؒ  ِ 103 - فاطمہ بنتِ عبدالرحمٰنؒ  ِ 104 - کریمہ بنت محمد مروزیہؒ  ِ 105 - بی بی رابعہ شامیہؒ  ِ 106 - اُمّ محمد زینبؒ  ِ 107 - حضرت آمنہ رملیہؒ  ِ 108 - حضرت میمونہ سوداءؒ  ِ 109 - بی بی اُم ہارونؒ  ِ 110 - حضرت میمونہ واعظؒ  ِ 111 - حضرت شعدانہؒ  ِ 112 - بی بی عاطفہؒ  ِ 113 - کنیز فاطمہؒ  ِ 114 - بنت شاہ بن شجاع کرمانیؒ  ِ 115 - اُمّ الابرارؒ (صادقہ)  ِ 116 - بی بی صائمہؒ  ِ 117 - سیدہ فاطمہ ام الخیرؒ  ِ 118 - بی بی خدیجہ جیلانیؒ  ِ 119 - بی بی زلیخاؒ  ِ 120 - بی بی قرسم خاتونؒ  ِ 121 - حضرت ہاجرہ بی بیؒ  ِ 122 - بی بی سارہؒ  ِ 123 - حضرت اُم محمدؒ  ِ 124 - بی بی اُم علیؒ  ِ 125 - مریم بی اماںؒ  ِ 126 - بی اماں صاحبہؒ  ِ 127 - سَکّو بائیؒ  ِ 128 - عاقل بی بیؒ  ِ 129 - بی بی تاریؒ  ِ 130 - مائی نوریؒ  ِ 131 - بی بی معروفہؒ  ِ 132 - بی بی دمنؒ  ِ 133 - بی بی حفضہؒ  ِ 134 - بی بی حفصہؒ بنت شریں  ِ 135 - بی بی غریب نوازؒ (مائی لاڈو)  ِ 136 - بی بی یمامہ بتولؒ  ِ 137 - بی بی میمونہ حفیظؒ  ِ 138 - بی بی مریم فاطمہؒ  ِ 139 - امت الحفیظؒ (حفیظ آپا)  ِ 140 - شہزادی فاطمہ خانمؒ  ِ 141 - بی بی مائی فاطمہؒ  ِ 142 - بی بی راستیؒ  ِ 143 - بی بی پاک صابرہؒ  ِ 144 - بی بی جمال خاتونؒ  ِ 145 - بی بی فاطمہ خاتونؒ  ِ 146 - کوئل  ِ 147 - مائی رابوؒ  ِ 148 - زینب پھوپی جیؒ  ِ 149 - بی بی میراں ماںؒ  ِ 150 - بی بی رانیؒ  ِ 151 - بی بی حاجیانیؒ  ِ 152 - اماں جیؒ  ِ 153 - بی بی حورؒ  ِ 154 - مائی حمیدہؒ  ِ 155 - لل ماجیؒ  ِ 156 - بی بی سائرہؒ  ِ 157 - مائی صاحبہؒ  ِ 158 - حضرت بی بی پاک دامناںؒ  ِ 159 - بی بی الکنزہ تبریزؒ  ِ 160 - بی بی عنیزہؒ  ِ 161 - بی بی بنت کعبؒ  ِ 162 - بی بی ستارہؒ  ِ 163 - شمامہ بنت اسدؒ  ِ 164 - ملّانی جیؒ  ِ 165 - بی بی نور بھریؒ  ِ 166 - مائی جنتؒ  ِ 167 - بی بی سعیدہؒ  ِ 168 - بی بی وردہؒ  ِ 169 - بی بی عائشہ علیؒ  ِ 170 - بی بی علینہؒ  ِ 171 - اُمّ معاذؒ  ِ 172 - عرشیہ بنت شمسؒ  ِ 173 - آپا جیؒ  ِ 174 - حضرت سعیدہ بی بیؒ  ِ 175 - طلاق کے مسا ئل
سارے دکھاو ↓

براہِ مہربانی اپنی رائے سے مطلع کریں۔

Your Name (required)

Your Email (required)

Subject

Category

Your Message